The best and high-quality urdu novels by mehwish ali tera ashiq may diwana ho awara urdu medium online read and pdf download.

Episode 16 Tera Ashiq May Diwana Ho Awara Mehwish Ali Novels 

Tera Ashiq May Diwana Ho Awara Mehwish Ali Novels Epi 16 to 20


#تیرا_عاشق_میں_دیوانہ_ہوں_آوارہ💞
#از__مہوش_علی💞
#قسط__16

حور کار سے نکل کر جانے لگی تو سفیان بھی پیچھے پیچھے آیا۔۔۔۔ ملک ولا کی سجاوٹ دیکھتے اور کافی ملازموں کو ہدایت دیتے دراب یا کسی کی بھی اسکی طرف نظرنا گئی۔۔۔۔۔
سفیان اس سے بات کرنا چاہتا تھا پر پیچھے شیری کو آتے دیکھ وہ چپ ہوگیا۔۔۔۔۔۔
کیسے ہو سیفی۔۔۔۔شیری نے اسکے کندھے کے گرد بازو پھیلا کر پوچھا۔۔۔
ٹھیک ہوں اور یہ تم سارے سارے دن کہاں غائب رہتے ہو۔۔۔۔سفیان نے ایک نظر حور کو دیکھ کر جو اب سیڑھیاں چرھتی اوپر جارہی تھی۔۔۔

پھر شیری سے بولا۔۔۔۔
بس یہی تھا ۔۔۔۔وہ اسکا کندھا تھپتھپاکر پری کی تلاش میں میں نظریں پھیری جو اسے نا دیکھی۔۔۔۔
اچھا آئو اندر ۔۔۔۔سفیان کو واپس مڑتا دیکھ کر بولا۔۔۔۔
نہیں یار گھر میں بہت کام ہیں بھائی اکیلا گھر کی سجاوٹ دیکھ رہا ہے ۔۔۔میں حور کو چھوڑنے آیا تھا اب جارہا ہوں۔۔۔۔پھر کبھی۔۔۔۔کہتے ایک نظر اوپر حور کے کمرے کے بند دروازے کو دیکھتا ۔۔۔واپس چلا گیا۔۔۔
اور شیری اندر آیا دل بےچین تھا پری کو دیکھنے کے لیے۔۔۔۔پر وہ دیکھ نہیں رہی تھی۔۔۔۔۔وہ سوچتا کچن کی طرف کافی کا کہنے چل دیا سر میں بہت درد ہورہا تھا ۔۔۔۔

آگئے تم ۔۔۔۔عالیہ بیگم نے شیری کو کچن میں داخل ہوتے دیکھ کہا۔۔۔پر شیری کی نظر پری پر تھی ۔۔کندھوں پر   دوپٹہ ڈالے لمبے بال پونی میں جکڑے اسکی کمر پر لہرا رہے تھے۔۔۔۔ عالیہ بیگم کے ساتھ کھڑی کسی بات پر مسکرا رہی تھی۔۔۔۔شیری کو دیکھ اسکے ہونٹوں سے مسکراہٹ کہیں غائب ہوئی۔۔۔۔۔جو شیری کو ذرا بھی پسند نہیں آئی۔۔۔۔۔

ہاں آگیا ۔۔۔کیونکہ آپکی بہت یاد آرہی تھی اس لیے ۔۔۔۔۔وہ چلتا اسکے قریب آیا اور پیار سے اسکے گرد بازو پھلاکر بولا البتہ نظر پری پر تھی جیسے اس سے بولا ہو۔۔۔۔۔اور یہ سچ ہی تو تھا وہ کہنا بھی اسی سے ہی چاہتا تھا اگر وہ سمجھتی۔۔

 چلے ہٹ بدماش دیکھی ہے کتنی یاد آتی ہے گھر والوں کی جو سارا دن رات غائب رہتے ہو۔۔۔۔اسنے مصنوعی جھڑکتے کہا۔۔۔۔جس پر شیری مسکرا دیا۔۔۔۔
سچی بڑی مما بہت آتی ہے ۔۔۔۔اس لیے دیکھو میری آنکھوں میں نیند سے بھری ہوئی ہے۔۔۔آپ لوگوں کی فکر میں ساری رات نیند

 نہیں آئی۔۔۔۔۔وہ شرارت سے کہتا پیچھے ہوا اور برتن صاف کرتی ملازمہ کے سارے صاف برتن واپس اسکے سامنے رکھے اور اشارے سے کچھ بھی کہنے سے منا کیا۔۔۔۔پری یہ سب نا سمجھی سے دیکھ رہی تھی عالیہ بیگم کی پشت تھی اس لیے وہ نہیں دیکھ سکی۔۔۔۔ملازمہ بیچاری پریشان ہوتی واپس وہی برتن صاف کرنے لگی۔۔۔۔۔
 پلیز بڑی مما جلدی کافی بیج دیں روم میں میرا سر درد سے پھٹ رہا ہے۔۔۔۔کہنے کے ساتھ سر مسلنے لگا۔۔۔پھر پری پر ایک نظر ڈالتا مسکرا کر آنکھ دباتا کچن سے نکلتا چلا گیا۔۔۔۔۔
پری نا سمجھی سے کندھے اچکا کر رہ گئی پر اسکے آنکھ دبانے پر اتنی تو ہمت آگئی تھی کے پیچھے اسے کوستی رہی۔۔۔۔۔اور شیری کی موجودگی میں اسے ڈر نہیں لگا تھا کیوں کہ عالیہ بیگم جو ساتھ تھی۔۔۔۔۔

عالیہ بیگم نے شیری کے لیے کافی بنا کر ملازمہ کی طرف مڑی جسکے اتنے ہی برتن سامنے پڑے تھے۔۔۔۔
تمہیں اتنی دیر ہوئی ہے ابھی تک برتن ویسے ہی پڑے ہیں۔۔۔۔وہ اس سے شہریار کو کافی دینے کا کہنا چاہتی تھی۔۔۔۔اور خود حماد صاحب والوں کو دینے جارہی تھی چائے ۔۔۔۔پر ملازمہ کے برتن ویسے ہی پڑے دیکھ کر غصے سے بولی۔۔۔۔
بب۔۔بیگم صاحبہ ہمنے تو۔۔۔۔وہ ہڑبڑا گئی۔۔۔پھر شیری کا بتانے والی تھی پر کچھ دیر پہلے والا اسکا اشارہ یاد آیاتو خاموش ہوتی سر جھکا گئی۔۔۔۔۔
 بیٹا تم جاکر دے آئو تب تک میں سب کو دینے جارہی ہوں ۔۔۔۔ڈرو نہیں صرف دروازہ ناک کرکے وہیں سے دے دینا۔۔۔۔۔عالیہ بیگم نے پری کا پیار سے گال چھوکر بولی۔۔۔جس پر پری بدحواس ہوگئی۔۔۔۔اور شیری کی چالاکی سمجھ کر اسکے ہاتھ میں پسینے آنے لگے۔۔۔۔۔
مم۔۔۔میں کیسے۔۔۔۔وہ پریشانی سے بولی۔۔۔۔دل کر رہا تھا کہیں غائب ہوجائے۔۔۔۔۔وہ اتنا تیز تھا کہ ملازمہ کو پہلے ہی پھنسا دیا۔۔۔۔

اچھا تم رہنے دو میں بعد میں آکر دیتی ہوں۔۔۔۔وہ اسکا خوفزدہ چہرہ دیکھ کر بولی ۔۔۔۔اور پھر ٹرے اٹھا کر جانے لگی کہ پری پیچھے سے بولی۔۔۔
مم۔۔۔میں جارہی ہوں دد۔۔دینے۔۔۔۔وہ اپنے ہاتھ کو مسل کر کہتی کانپتے ہاتھوں سے ٹرے اٹھائی ۔۔اسے عالیہ بیگم کو یوں جواب دینا اچھا نہیں لگا ۔۔۔۔۔
خوش رہو ۔۔۔۔۔عالیہ بیگم پیار سے کہتی چلی گئی ۔۔۔اور پری کلمہ پڑھ کر شیری کے کمرے کی طرف روانہ ہوئی۔۔۔۔۔

💞💞💞💞💞

کانپتے ہاتھوں سے دروازے پر دستک دی۔۔۔۔
آجائو۔۔۔۔شیری کی اجازت پر وہ دروازے کو دیکھ کر بولی۔۔۔۔۔

یی۔۔یہاں سے لے لیں۔۔۔اسکے کہنے پر جواب تو نہیں آیا پر کچھ دیر میں قدموں کی چاپ دروازے کی طرف آتی سنائی دی۔۔۔۔وہ ڈر کر تھوڑا  پیچھے ہوئی۔۔۔
شیری نے چہری پر  اپنی کامیابی کی مسکراہٹ سجاکر دروازہ کھولا اور تھوڑا سا ہاتھ آگے بڑھایا کافی کے لیے۔۔۔۔۔

پری نے اسکی طرف دیکھتے ڈرتے ڈرتے ٹرے آگے کی تو شیری نے ٹرے کے بدلے اسکی کلائی سے پکڑ کر اندر کیا اور دروازے کو واپس بند کردیا۔۔۔یہ سب اسنے اتنے اچانک کیا کے پری کو کچھ کرنے کا موقعہ بھی نا ملا۔۔۔۔۔

کک۔۔کافی لو مم۔۔مجھے جانا ہے۔۔۔۔وہ اپنے خوف سے فق چہرے کے ساتھ ٹرے آگے کرتی بولی ۔۔۔۔اسکے ہاتھوں کی لرزش کی وجہ سے ٹرے بھی کانپ رہی تھی۔۔۔۔وہ سرجھکائے بولتی شیری کے دل کی تاروں کو چھیڑ رہی تھی۔۔۔۔۔
اگر نا جانے دوں تو ۔۔۔۔ٹرے اسکے ہاتھ سے لے کر ٹیبل پر رکھا ۔۔۔وہ موقعہ دیکھ کر بھاگ رہی تھی جب شیری نے اسے پکڑ کر کھینچا اور اسکی دونوں کلائیوں کو اپنے مضبوط ہاتھ میں لیکر دیوار سے قید کرلیا ۔۔۔۔۔
یی۔۔یہ کیا کر رہے ہیں۔۔ہہ۔۔۔ہٹئے پیچھے۔۔۔۔پری اسکی گرم سانسوں کو اپنے اوپر محسوس کرتی گھبراتی اس سے خود کے ہاتھوں کو آزاد کروانے لگی ۔۔۔جس میں ناکام رہی۔۔۔۔۔

پیچھے کے راستے تمنے چھوڑے کہاں ہے جانم۔۔۔۔۔گھمبیر لہجے میں کہتے پری کو سانسیں روکنے پر مجبور کر گیا۔۔۔۔۔شیری کی انتہائی قربت پر وہ پسینہ ہورہی تھی۔۔۔۔۔مجھے ج۔۔جانے دیں ۔۔۔۔پپ۔۔پلیز۔۔۔۔۔میں صرف کک۔۔۔کافی دینے آئی تھی۔۔۔۔۔وہ اسکی آنکھوں میں ڈرتے دیکھ کر التجا کرنے لگی۔۔۔۔۔۔
پر مینے تو صرف کافی لانے کے لیے نہیں بلایا تھا۔۔۔۔وہ اسکے چہرے پر موجود بالوں کی لٹوں کو انگلی سے کان کے پیچھے کرتے ہوئے بولا۔۔۔۔۔

یہ۔۔یہ کیا کر رہے ہیں۔۔۔۔شیری کی انگلی کو اپنے چہرے پر پھیرتے دیکھ کر وہ گھبرا کر کہتی چہرے کو جھٹکنے لگی۔۔۔۔۔۔
جانم تمہیں محسوس کر رہا ہوں کہ تم صرف میری ہو۔۔۔۔۔۔تمہیں صرف میرے لیے بنایا گیا ہے۔۔۔۔۔تم پر صرف میرا حق ہے ۔۔۔۔۔۔ پری صرف شہریار کی ہے۔۔۔۔۔وہ صرف اسکی بن کر رہے گی۔۔۔۔۔تاحیات۔۔۔شہریار کو سوچے گی۔۔۔۔۔اپنے دل کو اسکے لیے دھڑکائے گی۔۔۔۔۔

وہ جنونیت سے کہتا پری کو کوئی پاگل لگ رہا تھا۔۔۔۔۔۔اسے شیری سے پہلے سے بھی کافی زیادہ ڈر لگنے لگا۔۔ اسکی جنونی باتیں اسے خوفزدہ کر رہی تھی۔۔۔ ٹانگیں کانپنے لگی ۔۔۔۔۔اور پری کا چہرا شیری کے چہرے کو خود پر جھکتے دیکھ کر ہلدی کی جیسا زرد پڑ گیا۔۔۔۔۔۔
 پر شیری کو وہ سب کہاں دیکھ رہا تھا اسے تو صرف اسکی قربت پاگل بنا رہی تھی۔۔۔۔۔۔دل میں تھا کے اسے دل چیر کر اندر چھپا لے۔۔۔۔۔۔ساری دنیا سے چھپالے ۔۔۔۔۔ایسی دنیا میں دونوں چلے جائیں جہاں صرف ان دونوں کے علاوہ کوئی اور نا ہو۔۔۔۔۔
اسنے ایک ہاتھ آہستہ سے پری کی نازک کمر کو پکڑ کر خود کے قریب کیا۔۔۔۔
اور ان سب میں کھویا۔۔۔
وہ دیوانہ وار اسکے چہرے کے ہر نقش کو چھو رہا تھا۔۔۔۔پری کی اکھڑتی سانسوں کی پروہ کئے بغیر  ۔۔۔۔۔۔جب اسے خود سے ڈر لگنے لگا تو ایک جھٹکے سے پری سے دور ہوا ۔۔۔۔۔۔۔ پری آنکھیں میچیں لرزتی کانپتی دیوار سے لگی اپنے تنفس کو بحال کرنے لگی۔۔۔۔۔۔

شیری نے خود کو سنبھال کر ایک گہرا سانس لیا۔۔۔۔۔پھر پری کی طرف نظریں اٹھائی جو ویسی ہی دیوار سے لگی ۔۔۔۔زرد چہرے سے رو رہی تھی۔۔۔۔۔۔

Iam Sorry Honey ......
وہ پہلی بار شرمندہ ہوتا اسکے آنسوں صاف کرتے بولا۔۔۔۔اس سے پری کی حالت دیکھی نہیں جارہی تھی۔۔۔۔دل میں جیسے خود کو درد محسوس ہونے لگا تھا ۔۔۔۔
آآ۔۔۔۔آپ۔۔۔۔۔ب۔۔بہت۔۔گندے ہیں۔۔۔میں۔۔آپ سے بہت۔۔۔نن۔۔نفرت۔۔۔۔کرتی۔۔ہوں۔۔۔بہت۔۔۔۔
میں آپکی کبھی۔۔۔۔نہیں ۔۔۔ہوں۔۔۔۔۔کبھی ۔۔۔۔نہیں۔۔مم۔۔میں۔۔چلی جائوں گی۔۔۔بہت۔۔۔بہت۔دور۔۔۔آپسے۔۔۔۔وہ اسکے ہاتھ جھٹکتی پہلی بار غصے سے کہتی۔۔۔۔۔شہریار کو ساکت کر گئی۔۔۔۔۔۔اسکی آنکھیں پری کے لفظوں پر غصے کی زیادتی سے سرخ ہوگئی۔۔۔ایک جھٹکتے سے سختی سے اسکے بازو سے پکڑ اپنے قریب کیا کر سرد آواز میں غرایا ۔۔۔۔

میں ایسا کبھی نہیں ہونے دونگا سمجھی۔۔۔ انسان ہوں تو انسان ہی رہنے دو۔۔۔۔۔حیوان بننے پر مجبور ناکرو۔۔۔پری۔۔۔۔۔اگر دنیا کے کونے میں بھی چھپوگی تو وہاں سے بھی ڈھونڈ لونگا۔۔۔۔۔۔ آج ایسا بولا ہے آئندہ بولوگی تو شہریار کا جنونی روپ دیکھوگی۔۔۔۔کہنے کے ساتھ اسے بیڈ پر دھکیلتا باتھروم کی طرف مڑا ۔۔۔۔پری کو لگ رہا تھا جیسے اسکا دماغ سن ہوگیا ہو۔۔۔دل کی دھڑکنوں کا شور اسے ڈرا رہا تھا۔۔۔
اور ایک بات اگر آئندہ دوپٹہ سر پہ نہ دیکھا تو اپنی خیریت کی مجھ سے کوئی امید نا کرنا۔۔۔۔۔وہ سرد آواز میں گویا ہوا اور دھاڑ کی آواز میں باتھروم کا دروازہ بند کیا۔۔۔۔جس پر پری اچھل کر بیڈ سے اٹھی۔۔۔
اور باتھ روم کے بند دروازے پر ایک نفرت بھری نظر ڈال کر کمرے سے بھاگی۔۔۔۔کیوں کے اندر باتھروم سے شیشا ٹوٹنے کی زوردار آواز آئی۔۔۔۔

💞💞💞💞💞

کل رات کو مایوں کا فنکشن تھا ۔۔۔۔۔پر حور کی طبعیت کی وجہ سے سب پریشان تھے۔۔۔حور کو بہت تیز بخار تھا۔۔۔۔۔کوئی سمجھ نہیں پارہا تھا سوئے سفیان کے۔۔۔۔۔
کہ اچانک اسکی طبعیت کیوں خراب ہوگئی ہے۔۔۔
ڈاکٹر نے کہا کہ دماغ پر دبائو اور ڈر پریشانی سے اسکی یہ حالت ہوئی ہے۔۔۔۔۔وہ مسلسل غنودگی میں بڑبڑا رہی تھی۔۔۔جو کسی کو سمجھ نہیں آرہی تھی۔۔۔۔انجکشن لگانے کے بعد وہ آرام کر رہی تھی ۔۔۔پر یہاں سب پریشان تھے۔۔۔۔۔
شیری اسکے قریب بیٹھا سر پر بوسہ دیتا۔۔۔۔اسے دیکھنے لگا۔۔۔جسکے آنکھوں کے نیچے ہلکے آگئے تھے۔۔۔۔۔

کچھ بھی تھا کتنا لاپروہ تھا پر اپنی بہنوں میں اسکی جان تھی۔۔۔وہ جان سے زیادہ عزیز تھیں اسے۔۔۔۔۔

سفیان حد سے زیادہ پریشان تھا اسے موقعہ ہی نہیں مل رہا تھا حور سے ملنے کا۔۔۔۔
اسے جب حور کی طبعیت خراب ہونے کا پتا لگا تو وہ دورتا ہوا ملک ولا پہنچا۔۔۔۔۔

جاری ہے۔۔۔۔۔

Episode 17 Tera Ashiq May Diwana Ho Awara Mehwish Ali Novels 



#تیرا_عاشق_میں_دیوانہ_ہوں_آوارہ💞
#از__مہوش_علی😍
#قسط__17

مایوں کے فنکشن کی ارینجمنٹ لان میں کی گئی تھی۔۔۔اسٹیج کو گیندے چمبیلی اور گلاب کے پھولوں سے سجایا گیا تھا۔۔۔۔ہر طرف خوبصورت لائٹیں جگمگا رہی تھی۔۔۔۔
سب مہمان آچکے تھے۔۔۔اور مایوں کی رسم سے پہلے نکاح پڑھوایا گیا تھا۔۔۔۔دراب مشال اور حسن نوشین کا۔۔۔
 دراب کے چہرے پر مسکراہٹ ہی انوکھی تھی ۔۔۔۔اور ہوتی بھی کیوں آج مشال احمد سے مشال دراب جو بن گئی تھی۔۔۔اسکی سب سے بڑی خوائش جو اسے مل گئی تھی۔۔۔۔اب دونوں دراب اور حسن بیٹھے انکے منتظر تھے۔۔۔۔
کمیل کی فیملی بھی موجود تھی اور کمیل نے اپنی ماں کو پری سے ملوانا تھا ۔۔۔وہ اسے کھو نہیں سکتا تھا۔۔۔اسے یہ ماننے سے کوئی عار نہیں تھی کہ اسے پریہ سے پہلی نظر میں پیار ہوگیا تھا۔۔۔۔
💞💞💞💞
 دراب اور حسن نے سفید کلر کی شیروانی پر زرد کلر کے مفلر  لیے تھے۔۔۔۔جس میں وہ بہت خوبصورت لگ رہے تھے۔۔۔۔
شہریار اور سفیان دونوں نے بلیک کلر کے سوٹ پہنے تھے ۔۔۔جس وہ کافی ڈیشنگ لگ رہے تھے۔۔۔فنکشن میں موجود لڑکیوں کی آنکھوں میں چمک رہے تھے۔۔۔ہر کوئی لڑکی مڑ مڑ کر انہیں دیکھتی۔۔۔۔۔ کمیل نے برائون شیروانی پہنی تھی جس میں  بہت اچھا لگ رہا تھا۔۔۔۔

سفیان کی نظریں بے چینی سے حور کی منتظر تھی۔۔۔۔کل سے اسے نہیں دیکھا۔۔۔۔صرف یہ سنا تھا کہ بخار تھوڑا کم ہوا ہے تو وہ تیار ہوئی ہے فنکشن کے لیے۔۔۔۔اب سفیان نے جو سنا تو بے چینی سے اسکے انتظار میں تھا۔۔۔جس کے آنے کی  کوئی کرن نظر نہیں آرہی تھی۔۔۔۔

💞💞💞💞 
شیری تو اپنی کرنے والوں میں سے تھا۔۔ اسکی ڈکشنری میں ویٹ نام کا کوئی الفاظ نہیں تھا۔۔۔۔
وہ ایک نظر سب پر ڈالتا اندر کی طرف چلا آیا۔۔۔ اس سے انتظار ہی نہیں ہورہا تھا پری کو دیکھنے کا اور ویسے وہ سب سے پہلے خود دیکھنا چاہتا تھا اسے ۔۔۔۔وہ پہلے خود اسکی تعریف کرنا چاہتا تھا۔۔ اسکے سجنے پر اپنا حق سمجھتا تھا۔۔۔
💞💞💞💞💞

حور کی طبعیت ٹھیک نہیں تھی تو پری ہی عالیہ بیگم کے چھوٹی موٹی ہیلپ کروارہی تھی جس پر وہ تھوڑی تیار ہونے میں لیٹ ہوگئی تھی۔۔۔سب تیار ہوگئی ۔۔۔حور نے گرے کلر کا بھاری مگر خوبصورت گھیردار فراک پہنا تھا جس پہ گولڈن کلر کا نفیس نگینوں کا کام کیا گیا تھاجو۔۔۔ اسکے پائوں کو چھو رہا تھا شانوں پر گولڈن کلر کا دوپٹہ زمین کو سلامی دے رہا تھا۔۔۔۔لمبے بالو کو سٹائل بنا کر کچھ آگے اور باقی پیچھے کھلے چھوڑ دئے تھے ۔۔۔۔پھولوں کے زیور ہاتھوں میں گجرے اور لائٹ میک اپ میں وہ بہت ہی پیار لگ رہی تھی۔۔۔
میک اپ سے سجی اسکی بخار سے سرخ آنکھیں سفیان کے ہوش اڑانے کے لیے کافی تھی۔۔۔۔

پری روم میں آئی تو حور نے اسے اورینج  کلر بھاری خوبصورت گھیریدار فراک دیا دونوں کی ڈزائن سیم تھی۔۔۔پر کلر چینج۔۔۔۔

ح۔۔حور یہ مجھ سے نن۔۔نہیں بندھیں گی۔۔۔پری نے فراک کے بیک سائیڈ پر موجود ڈوریوں کی طرف اشارہ کرکے کہا۔۔۔۔

تم  پہن کر باہر آ نا پھر میں باندھ دونگی۔۔۔۔اور پری اثبات میں سر ہلاکر کر باتھ روم میں گھس گئی۔۔۔۔۔

ابھی تھوڑی ہی دیر ہوئی تھی جب دروازے پر دستک ہوئی۔۔۔حور نے دروازہ کھولا تو ملازمہ تھی۔۔۔۔

اسنے کہا کہ آپکو مشال بی بی پکار رہی ہے اور  پری سے گجروں کا پوچھنا تھا مشال اور نوشین کے پارلر والی بی بی مانگ رہی ہے  ۔۔۔۔
ٹھیک ہے تم چلو میں وہ لیکر آتی ہوں۔۔۔۔حور نے پری سے پوچھا تو وہ غلطی سے اسٹور روم میں رکھ کر آئی ہے۔۔۔پھر حور نے کہا ۔۔۔۔

ٹھیک ہے تم جب تک باہر آئو میں گجرے دیکر آتی ہوں۔۔۔۔۔پری کے اوکے کہنے پر حور دور باہر سے لاک کرتی چلی گئی۔۔۔۔

💞💞💞💞💞

سفیان سے اور انتظار نا ہوا تو وہ سیدھا اندر چلا آیا۔۔۔۔کچھ دیر اسے ڈھونڈنے کے بعد وہ اسے اسٹور روم کی طرف اپنا فراک سنبھالتی جاتی ہوئی نظر آئی۔۔۔۔

وہ اسکے حسین روپ کو دیکھتے ہی ساکت ہوگیا تھا۔۔۔۔سفیان کو وہ آج سچ مچ کی حور لگی۔۔۔اسنے چشمہ بھی نہیں پہنا تھا۔۔۔سفیان کو اور مدہوش کرنے کے لیے۔۔۔۔
اس سے اور رہا نا گیا تو  اسکے قدم خود بخود اسکی اور  جانے لگے۔۔۔۔
حور اسٹور روم کا دروازہ کھول کر اندر داخل ہوئی اور اسکی لائیٹ جلائی ۔۔۔۔
پھر جلدی جلدی گجرے ڈھونڈنے لگی۔۔۔۔جو اسے ٹیبل پر رکھے ملے۔۔۔۔
اسنے ابھی انکی طرف ہاتھ بڑھایا ہی تھا جب پیچھے دروازہ بند ہونے کی آواز آئی۔۔۔۔وہ گھبرا گئی اسے لگا کسی بچے نے شرارت کی ہوگی اسے بند کرکے۔۔۔یہی سوچتی وہ مڑی تو بلب کی مدہم روشنی میں بلیک سوٹ اور  بالوں کو سٹائل سے سیٹ کیے اپنی پوری وجاہت سے دروازے سے ٹیک لگائے ۔۔۔ آنکھوں میں پیار  جزبات اور چہرے پر حسین مسکراہٹ لیے وہ اسے ہی دیکھ رہا تھا۔۔۔۔
بہت خوبصورت لگ رہی ہو سچ مچ کی حور۔۔۔گھمبیر جزبوں سے چوڑ آواز میں گویا ہوا۔۔۔۔

حور کے خوبصورت چہرے پر خوف کے سائے لہرانے لگے اور اسکے دروازہ بند کرنے پر اسکی ریڑھ کی ہڈی میں سرسراہٹ پھیل گئی۔۔۔۔
یہ۔۔یہ دروازہ کیوں بند کیا ہے۔۔۔۔ اسکی تعریف کو اگنور کرتی ۔۔۔ چاہ کر بھی خود کی آواز کو مضبوط نا کرسکی کیوں کے سفیان کے گہری نظریں اپنے وجود پر محسوس کرتی وہ لرزنے لگی تھی۔۔۔
ابھی اسے اسکی دودن پہلے والی حرکت اور اسکے ساتھ جو اسنے کیا وہ بھول نہیں پائی تھی۔۔۔۔

تاکہ ہم دونوں بغیر ڈسٹربنگ کے ایک ساتھ کچھ پل گذار سکے۔۔۔ کیوں بیگم ٹھیک سوچا نا۔۔۔۔وہ اپنی گھمبیر آواز میں کہتا حور کی طرف قدم اٹھانے لگا۔۔۔۔
بکواس نا کرو میں تمہاری بیگم نہیں ہوں سمجھے۔۔۔۔غصے سے کہتی۔۔۔
 اسے اپنی طرف آتا دیکھ کر پیچھے کو کھسکنے لگی۔۔۔دیکھو س۔۔سفیان میرے قریب مت آنا میں شور مچادونگی۔۔۔اور سب کو تمہاری زبردستی نکاح کرنے کے بارے میں بتادونگی۔۔

وہ پیچھے ہوتی دیوار سے لگتی انگلی سے اسے دور رہنا کو اشارہ کرتی اسے دھمکانے لگی۔۔۔۔۔اسے سفیان کی بولتی نظریں خوفزدہ کر رہی تھی۔۔۔۔۔

بتا دو۔۔۔۔پر ابھی نہیں یہاں سے جانے کے بعد ۔۔۔۔کہنے کے ساتھ دونوں طرف ہاتھ رکھ کر اسے قید کر لیا۔۔۔۔

وہ آیا تو اسکی خیریت معلوم کرنے تھا پر حور کا حسین روپ دیکھ کر خود کو اسکے قریب جانے سے ناروک سکا۔۔۔۔

پلیز س۔۔سیفی د۔۔دور ہٹو مجھے ڈر لگ رہا ہے۔۔۔وہ اپنی آنکھیں اسکے قریب آنے پر میچیں اپنی کانپتی آواز میں التجا کرنے لگی ۔۔۔۔
اگر یہاں سب کی پہنچ سے دور اکیلے سفیان کے حصار میں نا ہوتی تو اسکی حالت بگاڑ دیتی اسکے کئے پر ۔۔۔۔

پر اس وقت سفیان کی آنکھوں میں جزباتوں کا سمندر اور اپنے اتنے قریب ہونے پر وہ التجا کے سوا کچھ بھی ناکرسکتی تھی۔۔۔۔۔

 ویسے ڈر تو مجھے لگنا چاہیے کہ مجھ سے کچھ ہونا جائے تمہارے قیامت روپ کو دیکھنے کے بعد۔۔۔۔۔وہ اپنی انگلی اسکے چہرے سے بال دور کرتا معنی خیزی سے گویا ہوا۔۔۔۔۔

اسکی بات کا مطلب سمجھ کر حور کی ہتھیلیاں پسینے سے بھیگ گئی۔۔۔۔اور ماتھے پر ٹھنڈے پسینے کے ننھے ننھے قطرے نمودار ہوئے۔۔۔۔۔
جنہیں سفیان نے دیکھ کر چہرے پر ہلکی سی پھونک ماری ۔۔۔۔حور اس پر لمبا سانس کھینچ کر رہ گئی ۔۔۔۔۔

اسکی نظریں حور کے چہرے کے ہر نقش میں الجھنے لگی۔۔۔۔وہ اسکے تھوڑا مزید قریب ہوا تو حور نے بوکھلا کر اسے دور کرنے کے لیے جیسے ہاتھ اٹھائے تو سیدھے اسکی بلند آواز میں دھڑکتے دل کی جگہ پر لگے ۔۔۔۔ایک پل میں حور کے جسم میں جیسے کرنٹ پھیل گیا ۔۔۔۔ اسنے گھبرا کر ہاتھ پیچھے کر لیے ۔۔۔

اب اسکا بھی دل سفیان کے دل کی دھڑکنوں سے جیسے ریس لگانے لگا ۔۔۔۔۔

سس۔۔سیفی۔۔وہ اپنی حالت سے گھبراتی غصے سے جیسے چیخنے لگی۔۔۔۔
پر اس سے پہلے سفیان اسکی گردن پر جھک گیا ۔۔۔۔حور کا سانس بگڑنے لگی ۔۔۔۔چہرہ لال ٹماٹر کی طرح ہوگیا ۔۔۔۔ اور پھر آہستہ سے سفیان کے دونوں ہاتھ مضبوطی سے حور کی نازک کمر کو جکڑنے لگے ۔۔۔۔۔
حور اسکی پکڑ میں مچلنے لگی ۔۔آنکھیں سفیان کی حرکت پر پھٹنے کے قریب تھی ۔۔۔۔گھنی پلکوں کا بار توڑ کر آنسوں گالوں پر پھسلنے لگے جن کو سفیان کے ہونٹوں نے اپنی پوری شدت سے چن لیا۔۔۔۔
مم۔۔۔میرا دم گ۔۔گھٹ رہا ہے چھوڑو مجھے۔۔۔۔حور اپنی کانپتی آواز میں بولتی اسکے مضبوط ہوتے حصار کو توڑنے لگی ۔۔۔۔

جب سفیان کو کچھ اسکی طبعیت کا احساس ہوا تو اپنی پکڑ کو دھیلا کیا۔۔۔۔پر پوری طرح آزاد نہیں کیا تھا ۔۔۔۔۔

حور۔۔۔۔۔۔کان کے قریب آہستہ سانسوں  کے بیچ  اسے پکارا ۔۔۔اور اسکے کان کی لو کو ہونٹوں سے چھو لیا۔۔۔۔حور کا پور پور کانپ اٹھا ۔۔۔نا چاہتے ہوئے بھی اسنے مضبوطی سے سفیان کی شرٹ کو اپنی مٹھیوں میں پکڑلیا۔۔۔۔۔

کچھ پل تو اسکے خوفزدہ چہرے کو دیکھتا رہا اور پھر اسکا جھکا چہرا اوپر اٹھا کر اسکی گھنی بھیگی پکوں کو دیکھا۔۔۔۔ اسکی گرم سانسیں حور کے چہرے کو چھب رہی تھی۔۔۔۔

اسٹور روم میں بلب کی مدہم روشنی میں وہ دونوں ایک دوسرے کے انتہائی قریب کھڑے ایک دوسرے کی سانس کی آواز سن رہے تھے۔۔۔
حور کا بخار کی وجہ سے تپتا وجود خوف سے ٹھنڈا پڑنے لگا تھا۔۔۔سرخ آنکھیں سے مسلسل بہتے آنسوں اسے گلابی بنا گئے تھے۔۔۔۔

 پھر اسنے حور کی دونوں بھیگی آنکھوں کو باری باری اپنے ہونٹوں سے چھوا اور ناک میں چمکتی نوزپن پر کو چوما۔۔۔ حور سانس روکے کھڑی تھی۔۔۔اسے لگ رہا تھا جیسے وہ سن ہوگئی ہے۔۔۔
وہ ٹھر ٹھر کانپ رہی تھی۔۔اسکا دل کر رہا تھا سفیان کی خوفزدہ کرتی قربت سے بچنے کے لیے زمین پھٹے اس میں سما جائے۔۔۔۔

اسکی حالت غیر ہونے لگی جب سفیان نے آہستہ سے اسکے ہونٹوں اپنے لبوں سے قید کرلیا۔۔۔اور کمر پر پکڑ کچھ زیادہ ہی سخت ہوتی گئی۔۔۔۔وہ سانسیں بند ہونے سے سفیان کو دھکا دینے لگی پر اسکے فولادی وجود کو وہ ٹس سے مس بھی نا کرسکی۔۔۔۔
  پھر کچھ لمحو بعد اسنے اسے آزاد کیا تو حور لمبے لمبے سانس لینے لگی۔۔۔۔وہ پوری پسینے میں نہائی ہوئی تھی۔۔۔۔اور اپنی سرخ آنکھوں سے غصے سے اسے دیکھنے لگی۔۔۔

ایسے نا دیکھو ظالم بہک جائوں گا۔۔۔۔پھر تمہیں ہی شکایت ہوگی۔۔۔۔۔اب اپنا خیال رکھنا اور جلدی ٹھیک ہوجانا۔۔ 

مجھ سے دور بھاگنے  کا کبھی تصور بھی نہیں کرنا ۔۔۔۔سرگوشی میں کہتا  اپنے انگوٹھا  اسکے بھیگے سرخ ہونٹوں پر پھیرتا۔۔۔ اسٹور روم سے نکلتا چلا گیا۔۔۔۔
اور حور سرخ چہرے کے ساتھ اسکی پشت کو بھیگی آنکھوں سے نفرت سے دیکھنے لگی ۔۔۔پھر کچھ دیر بعد خود کو سنبھالتی اٹھی اور اسٹور روم کو لاک کرتی گجرے دینے چلی آئی مشال کے روم میں کیونکہ نوشین اور مشال کو وہیں پارلر والی تیار کر رہی تھی۔۔۔۔

💞💞💞💞

کہاں تھی حور اتنی دیر ۔۔۔نسرین بیگم اسکے سرخ چہرے کو  دیکھ پوچھنے لگی۔۔۔۔
جس پر حور گڑبڑا کر بولی۔۔۔
وہ۔۔وہ گجرے لینے گئی تھی۔۔۔مل نہیں رہے تھے ۔۔تو بس ان میں دیر ہوگئی۔۔۔۔پھر ان کی کھوجتی نظروں سے بچتی مشال کے قریب ہوتی انکے پھولوں کے زیور پہناتی پارلر والی سے ایسے ہی باتیں کرنے لگی جو ان کی جان پہچان والی تھی۔۔۔

اس سب میں حور کو پری تو بھول ہی گئی تھی۔۔۔

مشال اور نوشین نے بھاری ہلدی کلر کا شرارہ پہنا تھا۔۔۔جس پر کندن اور نگینوں سے نفیس سا کام کیا گیا تھا ۔۔۔پھولوں کے زیور میں بالوں کو سٹائل سے جورے میں باندھے خوبصورت سے میک اپ میں وہ بہت ہی خوبصورت لگ رہی تھی۔۔۔۔۔
سر پر بھاری نگینوں سے سجا ہم رنگ دوپٹے سے گھونگھٹ کروایا گیا تھا۔۔۔۔۔کلائیوں میں پہنے پھولوں کے کڑے ۔۔۔پیروں میں خوبصورت ہیل میں وہ کوئی اپسرہ ہی لگ رہیں تھیں۔۔۔

💞💞💞💞

انکے تیار ہونے پر انہیں لیکر باہر باہر اسٹیج پر لایا گیا۔۔۔۔۔
جہاں سب انہیں دیکھنے کے بعد ہرطرف شور سا مچ گیا تھا۔۔۔ہوٹنگ کی جارہی تھی۔۔۔۔

رنگ بے رنگی جلملاتی روشنیوں میں انہیں اسٹیج پر لایا گیا اور دراب کے پاس مشال اور حسن کے پاس نوشین کو بیٹھایا۔۔۔۔

دراب تو اسکے گھونگھٹ کرنے پر ہی جھنجھلایا گیا تھا۔۔۔کتنا دل کر رہا تھا اسے دیکھنے کو پر یہ ظالم رسمیں۔۔۔۔۔

مووی میکر انکی مووی بنانے لگا۔۔۔۔۔۔
مشال کا دل دھک دھک کر رہا تھا۔۔۔۔۔اسکے اندر عجیب سی فیلنگس تھی۔۔۔۔دراب کے ساتھ ایک نئے رشتے میں بندھنے سے۔۔۔
 نکاح مبارک ہو۔۔۔مسز دراب۔۔۔۔اسنے آہستہ سے اسکے قریب سرگوشی کی جس پر مشال کے سجے چہرے پر پیاری سی مسکراہٹ پھیل گئی۔۔۔۔
آپکو بھی نکاح مبارک ہو مسٹر مشال۔۔۔۔۔اسکے جواب پر دراب کا زبردست قہقہہ لوگوں کو اور بھی اپنی طرف متوجہ کرگیا۔۔۔مشال جھینپ گئی۔۔۔اور شرمندگی سے سر اور جھکالیا۔۔۔
سب کے چہرے پر مسکراہٹ چھائی تھی۔۔۔۔

حور بیٹا پری کہاں ہے ابھی تک آئی نہیں یہاں۔۔۔۔عائمہ بیگم نے حور سے پری کو یہاں نا پاکر پوچھا۔۔۔۔حور جو کب سے سفیان کی نظروں سے الجھتی اس سے بچتی پری کو تو بلکل فراموش کر گئی تھی۔۔۔۔

عائمہ بیگم کے پوچھنے پر زبان دانتوں میں دبا کر سر پر ہاتھ مارتی بولی۔۔۔۔
اففف مما شکر ہے آپنے یاد کروایا میں تو اس بیچاری کو بھول ہی گئی تھی۔۔۔۔
وہ کہتی اندر کی طرف بھاگی۔۔۔۔۔۔

Episode 18 Tera Ashiq May Diwana Ho Awara Mehwish Ali Novels 



#تیرا_عاشق_میں_دیوانہ_ہوں_آوارہ💕
#از__مہوش_علی
#قسط__١٨

💕💕💕💕

دروازہ کھلنے کی آواز پر پری کو لگا حور آگئی۔۔۔وہ باتھروم سے نکل کر باہر آئی۔۔۔
ح۔۔حور میرے ب۔بال الجھ گئے ہیں ڈوریوں میں۔۔۔وہ اپنے ہاتھ سے پیچھے کو بال نکالنے کی کوشش کرتی۔۔ بنا دیکھے ڈریسنگ آئینے کے سامنے آئی۔۔۔اسکا سر نیچے جھکا تھا۔۔۔آدھے لمبے بھیگے   بال جن سے پانی کی بوندیں ٹپک رہی تھی۔۔کچھ آگے اور باقی کے پیچھے اسکی ڈوریوں سے الجھے ہوئے تھے۔۔۔معصوم بھیگے چہرے پر بھی چھوٹی چھوٹی بوندیں موجود تھی۔۔۔
وہ اورینج بھاری فراک میں  پری ہی لگ رہی تھی۔۔۔شیری کی نظریں اسکے بالوں سے ہوتی پشت پر گئی جہاں سیاہ تل پورے آب و تاب سے جگمگا رہا تھا ۔۔۔ ڈریاں کھلنے کی وجہ سے اسکی آدھی پیٹھ بلکل نمایا تھی۔۔۔۔اسکے اندر اسکا ڈریس دیکھ کر جیسے لاوا ابلنے لگا۔۔جب وہ اسکا سر بغیر دوپٹے کے نہیں دیکھ سکتا تھا تو یہ بے ہودا ڈریس کیسے اس پر برداش کر سکتا تھا۔۔
شیری نے غصے سے اپنی نظریں پھیرلی۔۔۔اور تیش میں آ کر اسکے پیچھے آیا ۔۔۔
یہ کیسا بےہودہ ڈریس پہنا ہے ۔۔ جھٹکے سے اسکا رخ اپنی طرف کرتے وہ غصے سے غرایا ۔۔۔
پری تو جیسے ساکت ہوگئی ۔۔حور کی جگہ پر شیری کو دیکھ کر اسکا چہرا فق ہوگیا۔۔۔۔خوف سے ٹانگیں لرزنے لگی ۔۔۔اپنے بازو پر شیری کی پکڑ اتنی سخت تھی کہ اسے لگا وہ ٹوٹ جائیں گے۔۔۔۔

مم۔۔مینے نن۔۔۔نہیں لیا۔۔۔وہ آنکھیں میچے کپکپاتی بولی۔۔۔اسکی بات پر پکڑ اور سختی ہوئی تو پری کے منہ سے بے ساختہ سسکی نکلی۔۔۔
آہہہہہ۔۔۔وہ اپنے بازو کے طرف درد سے جھک گئی ۔۔۔تو سارے بھیگے بال  شیری کی باہوں میں گرے وہ جو قہربرساتی نظروں سے اسے دیکھ رہا تھا بالوں کو دیکھا ۔۔۔

دیکھا تو تھا نا۔۔۔

اسکے بالوں سے پکڑ کر چہرے اونچا کیا ۔۔۔تو اسکی بھیگی گھنے پلکوں کا بار توڑ کر آنسو  گالوں پر بہنے لگے۔۔
شیری کی اندر اسکے دودن پہلے والے الفاظوں کا غصہ جمع تھا جو آج اسے اس ڈریس میں دیکھ کر سب ساتھ حساب لینے لگا۔۔۔۔

م۔۔مجھے درد ہورہا ہے پپ۔۔پلیز چھوڑیں۔۔۔وہ اپنی خوفزدہ آنکھیں کھول کر بھوری سرخ آنکھوں میں دیکھ کر التجاکرنے لگی ۔۔جس پر شیری کے چہرے پر مسکراہٹ سی آگئی۔۔۔۔
مجھے بھی ہوا تھا درد جب تمنے دور جانے کا کہا ۔۔۔۔وہ اسکے چہرے کے قریب آہستہ سے بولا۔۔۔۔
پری نے حیریت سے اسے دیکھا۔۔۔۔یہ کیسا انسان تھا جو پہلے اسے اپنی زندگی میں آنے پر تکلیف دے رہا تھا اور اب اسے کے جانے پر ۔۔۔

خیر یہ تو تمہارے بس میں نہیں شیر کی قید سے نکلا۔۔ پر جو بس میں ہے وہ یہ کہ خود صرف شہریار کے لیے سوچو۔۔۔۔اپنے آپ کو شیری کی امانت سمجھ کر ہر بری نظر سے چھپو۔۔۔اگر یہ تم نا کرسکی تو شہریار کو اپنی چیزیں دنیا سے چھپانی آتی ہیں۔۔۔
تو میرے چھپانے سے بہتر ہے خود اپنے آپ کو چھپائو اگر یہ کام مینے کیا تو انسان کی آواز سننے کو ترسو گی صرف میرے علاوہ کسی زیروح کو نہیں دیکھ سکوگی ۔۔۔۔مسز شہریار ملک۔۔۔۔
کہنے کے ساتھ اس کا رخ آئینے کے طرف کیا اور بغیر اسکی ہچکیاں بھرتی حالت کی پروہ کیے ۔۔ اسکے بالوں کو ڈوریوں سے نکالنے لگا۔۔۔اسکے ہاتھ کی انگلیاں پری کی پیٹھ کو چھو رہی تھی جس پر اسکے پور پور میں سرسراہٹ پھیل جاتی ۔۔۔منہ پر سختی سے ہاتھ جمع لیا۔۔۔اور آئینے میں نفرت سے اسکے عکس پر کبھی کبھی نظر ڈال لیتی ۔۔۔

شیری اسکے بالوں کو ڈوریوں سے نکال کر آگے رکھا تو کالا تل اور بھی واضح ہوگیا اسکی  نظر اس سے ہوتی۔۔۔ پری کو آئینے میں دیکھا۔۔سفید چہرا لیے سرخ سرمئی آنکھوں سے اسے دیکھ رہی تھی۔۔شیری کے دیکھنے سے۔اسکے چہرے پر خوف کے سائے لہرانے ۔۔۔بھوری آنکھوں کے دیکھنے پر اسنے جلدی سے آنکھیں میچلیں۔۔۔۔

جس شیری مسکرادیا اور اپنی انگلیوں کی پشت اسکے تل پر پھیری ۔۔۔جس پر پری کے منہ سے خفناک چیخ نکلی۔۔۔۔
اور شیری کی مسکراہٹ قہقہے میں تبدیل ہوئی۔۔۔
دور جانا چاہتی ہو۔۔۔۔اسکی ڈوریاں باندھ کر دیکھی جس سے اسکی پیٹھ چھپ گئی۔۔۔تو اسے کچھ سکون سا محسوس ہوا۔۔۔
پھر بالوں کو آگے کرتے پوچھا ۔۔۔جس پر پری نے جلدی سے نفی میں سر ہلایا۔۔۔تو شیری مسکراتے گویا ہوا۔۔۔۔
گڈ گرل مائے ہنی ڈارلنگ۔۔۔۔اب جلدی سے تیار ہوکر آجائو سب ویٹ کر رہے ہوں گے انکی گڑیا کا۔۔۔۔سو ڈونٹ ویسٹ ٹائم ۔۔۔اسکی آنسو سے بھیگی رخسار تھپتھپا کر بولا ۔۔۔اور اسکے بالوں کی نکلتی مہک میں منہ دیکر ایک لمبی سانس لیکر اسکی گردن کی شہ رگ پر اپنے ہونٹ رکھ لیے ۔۔۔
پری کی تو مانو سانس اٹک گئی ۔۔۔اسنے بے دردی سے ناخون اپنی کلائی میں گاڑھ دئے۔۔۔۔۔اور درد کو اپنے اندر اتارتی آنکھیں میچ گئی۔۔۔۔۔

بالوں کو باندھو ایسے کہ ایک بھی بال دوپٹے سے ظاہر نا ہونا چاہیے ۔۔اور دوپٹا ایسے اوڑھنا کہ نا سر دکھے نا تمہاری پیچھے کی ڈوریا۔۔۔اوکے ڈارلنگ۔۔۔۔اسکا رخ اپنی طرف کرتے چہرا اوپر اٹھائے۔۔۔اسے ھدایت دینے لگا۔۔۔۔
جس پر پری نے کوئی جواب نا دیا تو اسنے بازو پر گرفت تھوڑی سخت کی تو وہ روتی بولی۔۔۔
اا۔۔ایسے ہی کک۔کرونگی۔۔۔بھاری آواز میں کہتی چہرے کو نیچے جھکا گئی۔۔۔۔

مجھے درد دینے کی کوشش کی تو اس سے بھی گہرے زخم ملیں گے۔۔۔سرد آواز میں کہتا اس پر ایک نظر ڈال کر کمرے سے نکلتا چلا گیا۔۔۔۔

پری وہیں روتی بیٹھتی چلی گئی۔۔۔اسکے اندر تھوڑی دیر کی جو خوشی تھی سب کہیں ہوا ہوگئی تھی ۔۔ایک جھٹکے سے اٹھی اور ڈریسنگ ٹیبل پر رکھی ساری چیزوں کو اپنی پوری طاقت سے زمین پر پھیکنے لگی۔۔۔
اور اپنا سارا غصہ ان پر نکالنے لگی۔۔۔۔۔

ہر طرف کانچ ہی کانچ بکھر گئے تھے اسکی زندگی کی طرح.  ۔۔
اور خود دہرام سے بیڈ پر گر گئی۔۔۔۔

حور جو اوپر آتی کمرے سے شور سن کر بھاگی تھی۔۔۔کمرے میں آکر دیکھا تو اسکا سر جیسے چکرا گیا۔۔۔
ہر طرف ڈریسنگ ٹیبل کی چیزیں بکھری کچھ ٹوٹی پڑی تھی اور پری بیڈ پر اوندھے منہ ہچکیاں لے رہی تھی ۔۔۔
حور کا دل گھبرانے لگا۔۔۔اور وہ ڈرتی آگے کو پری کی طرف بڑھی۔۔
پری نے قدموں کی چاپ سن کر خوف سے سر اٹھایا اسے لگا آواز پر شیری آیا ہوگا۔۔۔پر حور کو دیکھ کر اسکی سانس میں سانس آئی۔۔۔

سارا غم اپنے اندر چھپاتی آنسوں صاف کرتی غمزدہ سی مسکرا دی۔۔۔اگر کسی کو بتاتی تو شاید اسکا کیسا حال کرتا۔۔۔جس وہ تصور بھی نہیں کرنا چاہتی تھی۔۔۔

پری سب ٹھیک ہے۔۔۔اسنے گھبراتے ہوئے سرگوشی میں پوچھا۔۔۔اسے پری کی سرمئی آنکھوں میں پھیلے دہشت  سے ڈر ہونے لگا۔۔۔

ہہ۔۔ہاں پر تم کہاں چلی گئی تھی ح۔۔حور ۔۔؟؟ اسنے درد بھری آواز میں پوچھا پر حور کو بہت کرب سا محسوس ہوا اسکی آواز میں ۔۔وہ کانچ سے بچتی پیر سنبھال کر رکھتی بیڈ پر آئی۔۔۔۔
تو پری روتی اسکے لگے لگ گئی۔۔۔۔جس پر حور کو لگا وہ سانس نہیں لے پائے گی پری کی حالت دیکھ کر۔۔۔۔

کیا ہوا ہے پری کچھ بتائو تو صحیح ۔۔۔یہ سب کس نے کیا ہے۔۔۔مجھے معاف کردو۔۔۔میں بھول گئی تھی۔۔۔وہ اسکی ہچکیاں لیتے وجود کو گلے سے لگائے اسکی پشت تھپتھپاتی شرمندہ سی بولی۔۔

میں ڈر گئی تھی تو ب۔۔بس مجھ سے یی۔۔یہ سب ہوگیا۔۔۔اسنے اپنے آنکھوں کو مسل کر حور سے کہا۔۔۔۔
مجھے معاف کردو پلیز پری مجھے ایسے نہیں کرنا چاہیے تھا۔۔۔وہ اسکے بالوں کو چہرے سے ہٹاتی ندامت سے بولی۔۔۔

کک۔۔کوئی بات نہیں۔۔۔وہ زبردستی مسکرائی۔۔۔

پھر حور اسے لیکر دوسرے روم میں آئی اور پری کے مسلسل انکار کو نظرانداز کرتی ہلکا سا میک اپ کردیا ۔۔۔۔پھر حور کی حیریت سے پھٹی آنکھوں سے نظریں چراتی جیسا شیری نے کہا تھا بال کلپ سے پورے جکڑ کر سر پر دوپٹہ اوڑھ لیا۔۔۔
💕💕💕💕💕

 لان میں جہاں کئی لوگ بے صبری سے انتظار کر رہے تھے۔۔۔حور کے ساتھ آئی۔۔۔۔
وہ بہت پیاری لگ رہی تھی سر پر دوپٹا معصوم چہرے پر لائیٹ سا میک اپ ۔۔۔۔
آئمہ عالیہ بیگم نے دیکھ کر اسکے ماتھے پر بوسہ دیا۔۔۔
بلکل پری لگ رہی ہو ماشاللہ ۔۔۔اسکے سر پر ہاتھ پھیرتی پیار سے بولی جس پر پری مسکرا دی۔۔۔۔
اللہ نظربد سے بچائے۔۔۔۔عالیہ بیگم نے بھی اسکی تعریف کرتے پیار سے بولی۔۔۔۔

دوستوں سے باتیں کرتے شیری کی بھی نظر اسکی طرف اٹھی تو اسنے ہونٹوں کو گول شیپ میں دے کر وائو بولا۔۔ اور زور سے سیٹی بجائی جس میں کافیوں نے اسکا ساتھ دیا بغیر اسکے سیٹی بجانے کا مقصد سمجھ کر۔۔۔۔

پھر سب بڑو نے رسم شروع کی اور باری باری ہلدی مشال نوشین والوں کو لگاتے گئے۔۔۔سب نے خوشی خوشی رسم ادا کی پری حور نے بھی بڑی خوشی سے دونوں نے ہلدی لگائی ۔۔۔بڑوں کے بعد چھوٹوں کی باری آئی تو لڑکیوں نے ہنسی خوشی ہوٹنگ کے دوران انہیں  لگانے کے ساتھ ایک دوسرے کو بھی لگاتے گئے۔۔
اب دراب بھائی  مشال کو  اور حسن بھائی نوشین  لگائیگے ۔۔۔۔ایک کزن کے کہنے پر سب نے ساتھ دیا تو اور زور شور سے ہوٹنگ کرنے کرنے لگے۔۔۔جس پر دونوں ہی مسکرا دئے ۔۔۔جیسے من کی مراد پوری ہوئی ہو۔۔۔

مشال جو پہلے سے ہی گھبرائی شرمائی سر جھکائے بیٹھی تھی۔۔۔اس بات پر اسکی ہتھلیوں پر پسینہ سا ہونے لگا۔۔۔وہ کیسے دراب کے سامنے  نظریں ملائے۔۔۔۔سوچتی آنکھیں میچ گئی۔۔۔۔

بڑے سب انکی فرمائشوں پر مسکرانے لگے۔۔۔۔
پھر دراب نے آہستہ سے گھونگھٹ  اٹھایا تو مشال کے حسین روپ کو دیکھ کر جیسے ساکت ہوگیا۔۔۔۔وہ بنا پلکیں جھپکائے اسے دیکھ رہا تھا وہا اسٹیج پر کھڑے سب کے منہ پر دبی دبی سی ہنسی تھی دراب پہ۔۔۔مشال کو دھیروں شرم نے آن گھیرا۔۔۔تو اسنے بغیر دیکھے کو ایک چٹکی کاٹی جس پر وہ کرنٹ کھا کر ہوش میں آیا جس پر سب کے قہقہے گونجے۔۔۔۔

دراب خود اپنی بے خودی پر شرمندہ ہوگیا۔۔۔۔کنٹرول بڑے بھائی۔۔۔سفیان نے اسکے شانوں پر ہاتھ رکھ شرارت سے بولا ۔۔۔۔

اس پر دراب نے آنکھیں نکالی۔۔۔اور مسکرادیا ۔۔۔۔پھر ہلدی مشال پیار سے مشال کے گال پر لگائی ۔۔۔۔دونوں کے چہروں پر خوشی بھری مسکان تھی ۔۔۔۔۔
حسن نے بھی نوشین کو لگائی ۔۔۔۔

پھر کھانے کا دور چلا تو سب کھانے کی ٹیبلوں پر جا بیٹھے ۔۔۔۔پری بیچاری پوری کی پوری دوپٹے میں الجھی ہوئی تھی وہ اپنے دوپٹے کو سنبھالتی آگے جارہی تھی جب کسی سے ٹکرا گئی۔۔۔۔سوری سوری کہتی وہ دور ہوئی اور دیکھا تو مقابلے کمیل تھا ۔۔۔۔۔
جو چہرے پر مسکراہٹ سجائے اسے دیکھ رہا تھا ۔۔۔۔بہت خوب صورت لگ رہی ہو اینجل ۔۔۔۔آنکھوں میں اسکے معصوم چہرے کو سمائے بولا۔۔۔

اس پر پری کو سمجھ نا آیا تھینکس بولے یا شیری کی آنکھوں کو سمجھے جو قہربرساتی نظروں سے اسے دیکھ رہا تھا ۔۔۔۔

کمیل اسکو اور وہ شیری کو دیکھ رہی تھی۔۔۔جب شیری کو اپنے طرف آتا دیکھ کر وہ ہڑبڑاتی ۔۔۔۔
ممم۔۔میں آتی ہوں۔۔۔وہاں سے بھاگ گئی۔۔۔۔اور شیری کمیل کو دیکھ کر مٹھیاں بھینچ کر رہ گیا۔۔۔۔۔

💕💕💕💕💕

خیر خیریت سے فنکشن ختم ہوا کچھ لوگ جو یہی کے تھے وہ چلے گئے اور کچھ لوگ جو دور سے آئے تھے وہ کچھ فراز صاحب کے گھر اور باقی یہی ملک ولا میں رہ گئے۔۔۔۔۔شادی ہونے تک ۔۔۔۔

💕💕💕💕💕

تو موم کیسی لگی این۔۔۔میرا مطلب پریہ۔۔۔۔ کمیل اپنی ماں کے روم میں اس بیٹھا اس سے پوچھنے لگا ۔۔۔۔فیاض صاحب فراز صاحب کے ساتھ باتیں کر رہے تھے۔۔۔۔

ماشااللہ کوئی جواب نہیں بہت ہی معصوم اور پیاری تھی۔۔۔مجھے تمہاری پسند جی جان سے پسند آئی۔۔۔۔نسرین بیگم نے کہتے کمیل کے سر پر پیار سے ہاٹھ پھیرا۔۔۔۔
جس پر وہ کھل اٹھا ۔۔۔۔او میری سوئیٹ مدر آئی لو یو سو مچ۔۔۔کہنے کے ساتھ اسکے شانوں کے گرد باہیں ڈال کر خوشی سے جوم اٹھا۔۔۔
تو کب بات کر رہی ہیں ڈیڈ سے۔۔۔۔
شادی ہوجائے پھر کرتے ہیں بات ۔۔۔۔یہاں سے جاتے بات پکی کر کے جائیں گے اور پھر آگے جیسا وہ لوگ کہیں۔۔۔۔اسنے تو بیٹھے بیٹھے سب کچھ سوچ لیا ۔۔۔۔بغیر کچھ اور سوچے۔۔۔۔۔

💕💕💕💕

Episode 19 Tera Ashiq May Diwana Ho Awara Mehwish Ali Novels 



تیرا عاشق میں دیوانہ ہوں آوارہ 💕
از__مہوش علی 
قسط__١٩ 
💕💕💕💕
مہندی کے فنکشن ملک ولا میں اندر ہی رکھا گیا تھا ۔۔۔۔دلہنوں کو سجا کر اسٹیج پر بٹھادیا گیا ۔۔۔دونوں بہت خوبصورت لگ رہی تھی۔۔۔۔سب کے مہندی کی رسم کرنے کے بعد مہندی ڈزائنر نے مشال اور نوشین کو مہندی لگانی شروع کر دی۔۔۔

حور بیٹا یہ جاکر کچن میں رکھ کر آئو۔۔۔ عائمہ بیگم نے اسے ٹرے کا کہا جس میں ملازمہ جوس دے کر گئی تھی۔۔۔۔
جی مما۔۔۔حور ٹرے اٹھا کر کچن کی کے طرف چلی گئی۔۔عائمہ بیگم کی نظر کبھی کبھی پری پر جاتی جو نسرین اسکی بھابھی کے ساتھ بیٹھی تھی۔۔۔پری کے چہرے سے گھبراہٹ واضح تھی۔۔۔
عائمہ بیگم کو اندر ہی اندر کھٹک رہی تھی پتا نہیں کون سے سوال پوچھ رہی تھی اس سے۔۔۔۔

ایسا نہیں تھا کہ وہ کسی دوسرے قسم کی لڑاکو عورت تھی نسرین ۔۔پر عائمہ بیگم کو اس بات کی ٹینشن تھی کہ وہ اسکی آنکھوں میں پری کے لیے پسندگی دیکھ چکی تھی ۔۔۔وہ کوئی چھوٹی بچی نا تھی تین جوان بچوں کی ماں تھی اسکی پسندگی کا مطلب اچھی طرح سے جانتی تھی ۔۔۔۔اور وہی اس اندر سے نگل رہا تھا ۔۔۔کمیل ایک اچھا لڑکا تھا شاید طبعیت میں شہریار سے بھی اچھا ۔۔۔وہ اسکے بھائی کا بیٹا تھا۔۔۔ اسے بہت پیارا تھا۔۔۔پر ہر ماں کی طرح عائمہ بیگم بھی چاہتی تھی کہ اسکے بیٹے کو اچھی لڑکی ملے ۔۔۔ 

وہ یہ جانتی تھی کہ شیری سے اسکا نکاح وقتی ہے ۔۔پر ہر ماں کی طرح اپنے بچے کے بارے میں وہ بھی مطلبی ہوکر سوچتی تھی کہ پری شہریار کو ملے ۔۔۔
وہ اتنی پیاری اور معصوم تھی کہ کسی کے بھی دل میں بس جاتی تھی ۔۔۔اور شاید یہی نسرین بیگم کے ساتھ بھی ہوا تھا یا کمیل کی پسند برحال اسنے شیری کو راستے پہ لانے اور کچھ عقل ڈلانے کا سوچ لیا تھا ۔۔۔اسنے طے کر لیا تھا کہ خیرخیریت سے شادی ہوجائے پھر وہ شیری سے پری کے معملے میں بات کرے گی ۔۔۔۔کہیں ایسا ہی نا ہوجائے نسرین بیگم کی پسندگی حماد صاحب یا احمد صاحب کے کانوں میں پڑ جائے وہ تو اتنے اچھے رشتے کو نہیں ٹھکرائینگے اپنے بیٹے کا حال دیکھ کر۔۔۔۔۔

💕💕💕💕💕

حور کچن میں ٹرے رکھ کر مڑنے والی تھی پر صبح سے اسنے اور پری نے کچھ بھی نہیں کھایا تھا اور اس کچھ بھی نا کھانے کی وجہ سے اسکے پیٹ میں کھٹپٹ ہورہی تھی ۔۔۔۔

اور اس پر ستم پیزا کائونٹر پر کس بیوقوف نے چھوڑا تھا ۔۔۔اسکا کا کیا ۔۔۔پر جو بھی تھا اسکی پسند کی چیز موجود تھی ۔۔بھوک ہونے پر پسند موجود ہوتو کون بیوقوف پیچھے ہٹے گا ۔۔۔۔پھر مہندی بھی لگانی تھی کون کھلاتا ۔۔۔اور بھوک کی دونوں کچی ۔۔۔اسنے  دو پیس پری کے لیے رکھے اور خود پر شرمندہ ہوتی فریج سے بوتل نکال کر اس میں سے ایک گلاس لیا پھر پیزا اور بوتل کا گلاس کناروں تک بھرا ہوا ٹیبل پر رکھا ۔۔۔۔
باقی کی بچی ہوئی بوتل فریج میں میں رکھی جہاں اسکی نظر گلاب جامن پر گئی ۔۔۔ اسکے منہ میں پانی سا آنے لگا ۔۔۔

یا اللہ کونسا پلان بنایا ہے ۔۔۔ کہیں رات میں پیٹ بھر کے کھانے کی وجہ سے مروانا تو نہیں چاہتے ۔۔۔۔ مسکنی شکل بنا کر پہلے پیزا کو دیکھا پھر گلاب جامن کو ۔۔۔مطلب دونوں طرف ظلم۔۔۔۔۔

کچھ نہیں ہوتا حور اب اتنا تو کھا ہی سکتی ہو ۔۔۔خود سے بولتی کندھے اچکا کر پلیٹ میں تین نکال لیے ۔۔۔اور ناک کے قریب اسکی خوشبو سونگھ کر ۔۔۔۔آہاں ۔۔۔منہ سے نکلا۔۔۔۔۔۔

 ٹیبل پر رکھتی ہاتھ مسل کر بیٹھی اور عادت سے مجبور چشمے کو ٹھیک کرنے کے لیے انگلی بڑھائ پر وہ موجود ہوتا تو ٹھیک کرتی ۔۔۔مشال نے قسم دی تھی کہ جب تک میری شادی نا ہوجائے تب تک چشما نہیں پہنے گی ۔۔۔۔

اسکا مطلب یہ نہیں تھا کہ وہ گلاسس میں اچھی نہیں لگتی تھی ۔۔۔وہ بہت کیوٹ سی لگتی تھی ۔۔۔پر مشال کو اسکی سنہری آنکھیں چشمے کے بغیر بہت پسند تھی اس لیے ۔۔۔۔
سب باتوں کو دماغ سے جھٹکتی چمچ کے لیے ہاتھ بڑھایا پھر سوچا پہلے گلاب جامن ٹھیک ہیں یا پیزا ۔۔۔
وہ اسے سیریس ہوکر سوچ رہی تھی جیسے پاکستان میں بڑھتی مہنگائی کے بابت سوچ رہی ہو ۔۔۔

گلاب جامن لاسٹ میں ۔۔ہاں یہ ٹھیک ہے ۔۔سوچ کر اسنے ایک بائٹ پیزا کا لیا اور ایک گھونٹ بوتل کا بھرا۔۔۔۔
اسکا ابھی پیزا منہ میں ہی تھا جب سفیان بڑی شان سے چلتا ہوا مقابل چئیر پر بیٹھ گیا ۔۔۔اور اسکے ہاتھ سے پیزا لے کر اسے اپنی نظروں میں رکھتا اپنے منہ میں ڈال دیا ۔۔۔
حور کے لیے تو نگلنا ہی مشکل ہوگیا ۔۔۔ پر سفیان اسکی حالت کی پروہ کیے بغیر گلاس سے ایک گھونٹ بھر کر چمچ سے آدھا گلاب جامن منہ میں ڈال دیا ۔۔۔۔

جب شوھر کو بیوی کی بھوک کی ٹینشن ہوتو بیوی کو بھی شوھر کا سوچنا چاہئے ۔۔۔۔اتنا تو کچھ سیکھ لو میری ماں نہیں جو وہاں تمہیں عقل سیکھائے گی سب کچھ یہاں سے ہی سیکھ کر آئو ۔۔۔
وہ ٹیبل پر رکھے اسکے نازک سے سرخ ہاتھ کو اپنے ہاتھ میں لیکر سنجیدہ سے اسے سمجھانے لگا ۔۔۔۔

یہ کیا بد تمیزی ہے ۔۔ اپنا ہا تھ اسکے ہاتھ سے جھٹکے سے نکال کر آگ بگولہ ہوگئی۔۔۔
بکواس نا کیا کرو وہاں آئے گی میری جوتی اور ایک بات کان کھول کر سن لو اگر آئندہ تمنے مجھے بیوی کہا تو میں کس رشتے کا بھی لحاظ نہیں کروں گی اور سڑک پر میرے بھائیوں سے جوتے پڑوائوں گی ۔۔۔پھر جو ماموں سے اور پورے خاندان سے لاتیں لگے گی وہ تمہیں جینے کے لائق بھی نہیں چھوڑیں گی ۔۔۔
وہ آج اور کل کا غصہ ایک ساتھ نکالتی جو منہ میں آیا بولتی ایک جھٹکتے سے اٹھی بغیر سفیان کے سرخ چہرے کو دیکھے ۔۔۔۔
اسکے ابھی دو قدم دور بھی نہیں ہوئے تھے کہ سفیان نے جھٹکے سے اسے دونوں بازوں سے پکڑ کر کھینچا اور  اپنے قریب کر لیا اسکی انگلیاں حور کے بازوں میں چھب سی گئی تھی۔۔۔۔
 حور کے منہ سے درد بھری آہ نکلی۔۔۔۔
جب میں پیار سے بات کرتا ہوں حور جانم تو تمہیں سے ہضم کیوں نہیں ہوتی۔۔۔وہ سرد آواز میں اس سے پوچھنے لگا ۔۔۔حور کی سنہری آنکھوں میں نمی سی پھیل گئی ۔۔۔۔

س۔۔سیفی درد ہورہا ہے ۔۔۔۔وہ بازو چھڑوانے کی کوشش کرتی جب ناکام رہی ۔۔ درد برداشت سے باہر ہوا تو سسکتی بولی ۔۔۔
ہاں ایسے بات کیا کرو ایک دم پیار سے ۔۔۔وہ پکڑ کو نرم کرتا پیار سے بولنے لگا ۔۔۔اوپھر اسے تھوڑا قریب کرکے اسکی پشانی پر ہونٹ رکھ لیے ۔۔۔حور خاموشی سے زہر اپنے اندر اتارنے لگی ۔۔۔۔
 تمہیں ایک بات بتائوں ۔۔۔۔اسکے کان کے قریب آہستہ سے بولا جس پر حورنے نفرت سے سر جھٹکا ۔۔۔۔
 چلو تم نا پوچھو میں ہی بتادیتا ہوں ۔۔۔اسکے بالوں کی لٹوں کو انگلی سے کان کے پیچھے کیا اور پھر اسکے کان کے قریب جھک کر سرگوشی میں بولا ۔۔۔۔
چاہے تمہارے بھائے مار دیں یا پاپا ختم کر دے حور بیبی یا خاندان والے بے دخل کر دیں  ۔۔۔ پر یہ یاد رکھنا تم صرف میری ہو سفیان کی حور ۔۔۔۔اور اسکی ہی رہوگی ہمیشہ ۔۔۔۔۔اب چلو اچھی بیوی کی طرح یہ سب ختم کرو۔۔۔۔اسے لیجاکر واپس چیئر پر بٹھایا اور پیچھے سے اسکے کندھے پر سر رکھ کر ہاتھ اپنے ہاتھ میں لیکر اس کی ہتھیلی پر انگلی سے ایس لکھا۔۔۔۔

 سمجھ گئی ڈول ۔۔۔یہ ضرور لکھوانہ بائے جانم اسکی گال پر کس کر کے کچن سے نکلتا چلا گیا ۔۔۔۔

 میں یہ تمہاری ساری اکڑ توڑ دونگی سفیان ملک جینا حرام کر دونگی تمہیں منہ دیکھانے کے قابل نہیں چھوڑونگی۔۔۔ہاتھ سے ٹیبل پر رکھی پلیٹ کو فرش پر پھیکتی جو گلاب جامن کے ساتھ چکنا چوڑ ہوگئی۔۔۔۔غصے سے کہتی گال ڑگرنے لگی ۔۔۔ پر اپنے الفاظوں پر جیسے ڈھٹ گئی ۔۔۔۔بغیر سوچے کے کلہاڑی سیدھا اسکے پائوں پر ہی ناگرے ۔۔۔۔
💕💕💕💕💕

وائو پری کتنی پیار مہندی لگی ہے تمہاری۔ ۔۔حور بسترے پر بیٹھی اسکے چھوٹے سرخ ہاتھوں پر خوبصورت سی مہندی کی ڈزائن دیکھ کر حور کے منہ سے بے ساختہ نکلا ۔۔۔

پری بھی اپنے ہاتھوں دیکھ کر مسکرا دی۔ ۔۔اسے مہندی، بارش برف  ،پھول بہت پسند تھے ۔پر نا یہ سب پسندگی اپنے باپ کے گھر کبھی پوری ہوئی نا یہاں ۔۔۔۔پر اب جب اسکے ہاتھوں پر مہندی لگی تھی تو معصوم چہرے پر مسکراہٹ نے جیسے بسیرا کر دیا تھا۔۔۔۔ وہ بار بار اپنے ہاتھوں کی مہندی دیکھتی خوش ہوجاتی۔۔۔۔ اور دوسری وجہ شیری کو احمد صاحب نے کچھ کام سے کہیں بیجھ دیا تھا تو وہ صبح سے گھر نہیں تھا ۔۔۔۔۔

آآ۔ ۔آپکی بھی ۔۔پری نے اسکے ہاتھوں پر لگی سمپل سی ڈزائن کی طرف اشارہ کیا۔۔۔۔ حور کو مہندی پسند تھی نا نہ پسند ۔۔ موڈ ہوتا تو لگالیتی نہیں تو نہیں ۔۔۔آج لگانا تو نہیں چاہتی تھی پر بہن کی شادی کی وجہ سے لگالی۔ ۔۔
۔اسے ہر موسم پسند تھا سوائے بارش کے کیوں کہ اسے بہت ڈر لگتا تھا بارش ہنگامے اور جھگڑوں سے ۔۔۔۔

پھر دونوں شادی میں اپنی تیاریوں کے بارے میں باتیں کرتی مہندی جب تھوڑی سی سوکھی۔ ۔۔رات کے 2:30 ہونے لگے تو وہ دونوں سونے کی نیت سے لیٹ گئی ۔۔۔ حور کی تو آنکھ لگ گئی پر پری کے دماغ میں نسرین بیگم کی باتیں گونج رہی تھی ۔۔۔ جو کمیل کے بارے میں اسکی اچھی عادتوں کے بارے میں بتابتا کر سر کھا گئی تھی ۔۔۔

اور اسکے بارے میں بھی پوچھنے لگی ۔۔۔ وہ دونوں ماں بیٹے عجیب لگے اسے ایک گھور گھور کر دیکھتا مسکرا رہا تھا ۔۔۔اور ماں پیدائش سے لیکر اب تک کی بایو ڈیٹا لینے لگی ۔۔۔۔

پری سوچتی کھلکھلا کر ہنسی ۔۔۔۔پھر حور کی نیند کا خیال کر کے ہنسی کو مسکراہٹ میں تبدیل کر دیا۔ ۔۔۔

💕💕💕💕💕

مشال کو نیند نہیں آرہی تھی ۔۔پر وہ ساتھ سوئی اپنی کزن روبیہ کی نیند کا خیال کر کے ایک ہی سائیڈ پر پڑی تھی ۔۔۔۔
کل سب کچھ بدل جانا تھا ۔۔۔زندگی جینا سوچنا ،کمرا ،رشتہ توپہلے ہی بدل چکا تھا پر کل ہر چیز نے نئی شرعات کرنی تھی ۔۔۔
سب کچھ خوشی غم ہر ڈور ایک انسان کے ساتھ باندھنی تھی ۔۔ اس کے قدم سے قدم ملا کر اسکے سنگ چلنا اسکا ہر دکھ اپنے اندر سما کر اسکے خوشی دینی تھی ۔۔۔۔۔
انہیں سوچوں میں تھی جب ٹیبل پر رکھا موبائل بج اٹھا ۔۔۔ اسنے جلدی سے روبی کی نیند نا ٹوٹ جائے سوچ کر اوکے کر کے کان سے لگایا۔ ۔۔۔
تو کافی دیر تک خاموشی تھی ۔۔۔اسنے موبائل کان سے ہٹا کر نمبر دیکھا جہاں دراب لکھا تھا۔۔۔
رات اس پہر دراب کی کال دیکھ کر اپنا سر پیٹ لیا۔۔۔کیا ضرورت تھی اوکے کرنے کی اندھی دیکھ تو لیتی ۔۔۔خود سے بڑبڑاتی اٹھ بیٹھی۔۔۔۔
اسکے چہرے پر  گھبراہٹ سی پھیلنے لگی ۔۔۔بار بار اپنے مہندی سے سجے ہاتھوں میں موبائل دیکھ کر ہونٹ کاٹنے لگتی۔۔۔۔
مشال۔۔۔؟ سپیکڑ سے دراب کی گھمبیر گونجی ۔۔۔۔مشال ایکدم گھبرا کر اور بلش کرتی بیڈ سے دور ہوئی ۔۔۔۔۔
وہ پوری بوکھلائی ہوئی تھی دراب کی پکار پر بھی کوئی جواب نا دیا ۔۔۔اسے شرم آرہی تھی بھلا کیسے وہ دراب سے بات کرے جس کی زندگی میں آنے کو صرف کچھ ہی گھنٹے تھے ۔۔۔۔۔

وہ شرم سے سرخ پڑتی ڈریسنگ ٹیبل سے ٹیک لگائے اپنے ہاتھ کے ناخون کو کبھی دیکھتی کبھی منہ کے قریب لے جاکر واپس پیچھے کر دیتی ۔۔۔۔

دراب کی کافی بار پکارنے پر اسنے صرف گھٹی آواز میں  یہ کہا۔۔۔۔
ہوں ۔۔۔اس میں بھی ماتھے پر پسینے سے آگئے تھے ۔۔۔
 جاگ رہی تھی ۔۔۔۔دراب بیڈ پر لیٹا روم کی چھت پر لگے خوبصورت سے فانوس کو دیکھ پوچھا ۔۔۔۔

ن۔۔نہیں۔۔۔۔۔اسنے ہڑبڑا کر بولی کہیں وہ کچھ اور ہی نا سمجھ لے ۔۔۔۔

میں بھی جاگ رہا ہوں۔۔۔وہ اسکی ہڑبڑاہٹ میں ہی سمجھ گیا تھا ۔۔۔۔
وہ جلدی سے گھبرا کر بولی ۔۔۔۔د۔۔دراب مجھے نیند آرہی ہے ۔۔۔
جس پر وہ مسکرادیا۔۔۔۔
ٹھیک ہے سو جائو۔۔۔۔ابھی ہر بات کی اجازت ہے ۔۔۔اور اچھے سے پوری نیند کر کے اٹھنا ۔۔۔۔۔اسکا ذو معنی لہجہ مشال کا دل دھڑکا گیا ۔۔ہاتھ کی ہتھلیاں بھی پسینے میں بھیگ گئی ۔۔۔۔
اسنے ہڑبڑا کر کال کاٹی ۔۔۔۔اور لمبا سانس لینے لگی ۔۔۔۔
کچھ دیر وہیں کھڑی رہی پھر آہستہ سے قدم اٹھاتی بیڈ کی طرف آئی ۔۔۔۔
بیڈ پر لیٹتے اسکے بلش کرتے چہرے پر پیاری سی مسکان تھی ۔۔۔۔

💕💕💕💕💕

Episode 20 Tera Ashiq May Diwana Ho Awara Mehwish Ali Novels 



#تیرا_عاشق_میں_دیوانہ_ہوں_آوارہ💕
#از__مہوش_علی
#قسط__٢٠

ابھی سوئے انہیں کچھ ہی دیر ہوئے تھی کہ۔۔۔ پری کو بہت بھوک لگنے لگی ۔۔۔وہ اٹھ کر حور کو دیکھنے لگی جو نیند کے مزے لے رہی تھی ۔۔۔۔اسنے ایک بار کوشش کرکے حور کو پکارا۔۔۔

حور۔۔؟پر وہ ہوش کی دنیا میں ہوتی تو جواب دیتی۔۔سونے کے بعد وہ پری کے بھی ٹکر کی تھی ۔۔مطلب دنیا ادھر کی ادھر ہوجائے پر ان دونوں کو ہوش نہیں رہتا تھا ۔۔۔پر آج پری کا بھوک سے برا حال تھا۔۔۔۔اس لیے نیند بھی رخصت ہوگئی تھی ۔۔۔

حور کی طرف سے اندھیرا ہی ملا تو وہ بیڈ سے اٹھی ۔۔۔اور قالین پر چکر لگانے لگی پر بھوک نے بھی سوچ لیا تھا آج اسے تڑپا کے ہی رہے گی ۔۔۔۔

آخرکار مجبور ہوکر وہ ایک نظر حور پر ڈالتی پھر اپنے نائیٹ سوٹ کو دیکھا ۔۔۔۔پنک شارٹ شرٹ اور سفید گھیریدار شلوار میں وہ کوئی ڈول ہی لگ رہی تھی ۔۔۔اسنے دوپٹہ اٹھا کر شانوں پر ڈالا ۔۔۔

ایک نظر حور پر ڈالتی سفید گلابی نازک ننگھے پائوں کو قالین پر رکھتی آہستہ سے دروازہ کھول باہر نکلی۔۔۔

 دل میں یہ سکون تھا کہ ظالم شیر یہاں نہیں تھا ورنہ وہ پائوں بھی باہر نا نکالتی کمرے سے ۔۔۔۔

سارے گھر میں سکوت چھایا ہوا تھا سب ٹھک ہار کر کچھ گھنٹو کا آرام کرنے اپنے کمروں میں موجود تھے ۔۔۔ وہ آہستہ سے سیڑھیاں اترتی نیچے آئی۔۔۔۔

وہ کچن کی طرف آئی تو وہاں کی لائیٹ روشن تھی ۔۔۔ اور اندر سے کھٹ پتھ کی آواز آرہی تھی ۔۔۔۔
پہلے تو وہ ڈر گئی ۔۔۔ پر پھر ملازمہ کا خیال آتے اندر کی طرف آئی ۔۔۔۔

اسکے قدم وہیں تھم گئے جب اسکی نظر کائونٹر پر پڑی وہاں کوئی اور نہیں شہریار موجود تھا ۔۔شاید ابھی آیا تھا ۔۔۔۔اور برتنوں کی آواز اس لیے تھی کیوں کے وہ کافی بنا رہا تھا ۔۔۔۔

اسکی بھوک پیاس اندر ہی مر گئی شیری کو دیکھ کر ۔۔۔شیری صرف سائیڈ فیس دیکھ رہا تھا ۔۔۔وہ بنا آواز کیے بغیر سانس لیے مڑی۔۔۔۔

ہنی میں تمہارے پہنچنے سے پہلے ہی تمہاری مہک سے جان جاتا ہوں کہ تم آرہی ہو ۔۔اس لیے واپس جانے سے بہتر ہے اندر آئو۔۔۔۔

اسکا لہجہ وارنگ دیتا ہوا تھا۔۔۔پری اسکی باتوں کی طرف دھیان دیے بغیر جانے لگی اس وہ نہیں رکنا تھا ۔۔۔بھوک جائے بھار میں اسے اپنی جان عزیز تھی ۔۔۔

پری یار میں ابھی غصہ  کرنے کی خوائش میں نہیں ہوں سر میں شدید درد ہے اس لیے ۔۔۔شاباش آجائو ۔۔۔۔۔اسکا لہجہ بلکل عام سا ہوگیا پر پری کو اس میں بھی خوف سا آنے لگا تھا ۔۔۔۔

مم۔۔میں صرف آواز س۔۔سن کر آئی تھی ۔۔۔وہ جھوٹ بولنے کی بھرپور سی کوشش کرنے لگی جو شیری کے سامنے بلکل بھونگی تھی ۔۔۔۔

غلط بات جھوٹ نہیں بولتے ۔۔۔۔اسکے ٹھنڈے نرم لہجے پر پری کو لگا شاید اسے دورے پڑتے ہیں ۔۔۔۔کبھی چیختا ہے کبھی نرم کبھی غصہ کبھی جنون والا ۔۔۔پتا نہیں کون سی بیماری تھی اسکو ۔۔۔۔جو پری کا چھوٹا سا دماغ سمجھنے سے رہا۔۔۔۔
یہ نہیں تھا وہ بیمار تھا ۔۔بات یہ تھی کہ۔۔۔پہلے نفرت پھر اس سے محبت ، پیار عشق میں سے جنون سب نے ملکر اسکا دیواناپن بنا ڈالا تھا ۔۔۔۔جو ہر حدوں کو جانتا تھا ۔۔۔۔اب یہ دیوانہ پن پتا نہیں کیا کرے آگے۔۔۔۔۔

وہ کافی کپ میں ڈالتا اسے پوز کر رہا تھا جیسے وہ اسکے حکم سے انکار نہیں کرے گی ۔۔اور وہ سچ ہی تو تھا ۔۔۔پری نے کب اسکی بات کا انکار کیا ۔۔۔۔ابھی بھی اندر میں غصہ سمائے چہرے پر معصومیت منہ پھولا کر اندر آئی ۔۔۔۔

شیری نے خاموشی سے کپ ٹیبل پر رکھا اور ایک نظر اسے دیکھا ۔۔۔اپنی رنگت کی جیسی گلابی  شرٹ سفید شلوار اور سفید دوپٹہ ۔۔۔اس پر نظر پرتے ہی پری نے ہڑبڑا کر سر پر دوپٹہ اوڑھ لیا۔۔۔۔ننگھے نازک پائوں فرش پر رکھے ۔۔۔۔اسے اسکے ننگھے پائوں چلنا ذرا بھی پسند نا آیا پر ابھی کچھ نا بولا۔۔۔۔۔ بھوری آنکھیں اس پر مرکوز کیے کپ اٹھا کر ایک سپ لیا اور واپس رکھ کر کرسی کھسکا کر اسے بیٹھنے کا اشارہ کیا ۔۔۔

 جس پر پری ڈرتی ہوئی کبھی ہاتھ مسلتی اور کبھی گھنی پلکوں کے جالر سے اسے دیکھتی آہستہ سے کرسی پر بیٹھ گئی ۔۔۔۔

اسکے بیٹھنے کے بعد وہ بنا کچھ کہے فریج میں دیکھنے لگا ۔۔۔۔اور وہاں سے ہلکی سی ڈشز نکال کر مائکرو ویو اون میں انہیں گرم کر کے پلیٹ میں نکالنے لگا۔۔۔۔

پری جو ہونٹ کاٹتی اسکے حملے کے انتظار میں تھی پر جب کافی ٹائم ہوگیا شیر نا غرایا تو جیسے اسکے اندر میں حیریت کے پہاڑ ابلنے لگے ۔۔۔۔ وہ بلکل بھی نہیں سمجھ پارہی تھی کہ یہ اسکی زندگی میں ہوکیا رہا ہے ۔۔۔۔۔

وہ انہیں سوچوں میں الجھی ہوئی تھی ۔۔۔جب شیری نے بغیر اسکے بتائے اسکے سامنے کھانا رکھا ۔۔۔۔ اسے لگ رہا تھا وہ خواب دیکھ رہی ہے ۔۔۔آہستہ سے ہاتھ نیچے کرکے اپنی کلائی میں چٹکی کاٹنے لگی ۔۔۔۔جو کچھ تیز ہی کاٹی گئی درد تو ہوا پر یہ بھی یقین ہوگیا کہ خواب نہیں ہے ۔۔۔۔۔اسکی یہ حرکت شیری کی تیز نظروں سے پوشدہ نہیں رہ سکی جس پر اسکے چہرے پر نا محسوس سی مسکراہٹ تھی۔۔۔۔

وہ کبھی ڈشز کو دیکھتی کبھی سامنے بیٹھے ٹیبل پر بجتی اسکی انگلیوں کو ۔۔اوپر دیکھنے کی ہمت جو نہیں تھی ۔۔۔۔۔جب اسکے کانوں میں شہریار کے اسی لہجے میں الفاظ پڑے۔۔۔۔

ہاتھ دیکھائو اپنے۔۔۔۔۔
نا چاہتے ہوئے بھی ڈرتے ہوئے مہندی سے سجے  ہاتھ اپنے ٹیبل پر رکھے ۔۔۔خوف تھا کہ اسکے رحم کرم پر ہونے کی وجہ اور اتنی دیر چپ ہونے کے بعد پھر کچھ کہہ نا دے ۔۔۔

شیری نے آہستہ سے ہاتھ  اپنی نرم پکڑ میں لیکر اسے ہاتھ دیکھنے لگا۔۔۔۔۔اسکی پکڑ ایسی تھی جیسے کوئی نازک سی چیز جو ذرا سا چھونے سے ٹوٹ نا جائے ۔۔۔۔۔

اب پری کو سچ میں اسکی دماغی حالت پر شک ہونے لگا۔۔۔۔بے ساختہ اسکی نظر اوپر اٹھنے لگی جو پکڑے تو اسکے ہاتھ ہوا تھا پر نظر پری کے معصوم الجھے چہرے پر تھی ۔۔۔۔۔

اسنے سٹپٹا کر سر ہی جھکا لیا ۔۔۔۔ سرمئی آنکھوں میں جو الجھن تھی وہ شیری نے وہ ساری سمجھ گیا تھا۔۔۔۔اور چہرے پر خوبصورت سی مسکراہٹ نے آن گھیرا۔۔۔۔۔

 
کھانا کھائو ۔۔۔بغیر اسکی الجھن سمجھائے اسے دوسرہ حکم دیا جس پر پری نے فوراً عمل کیا۔۔۔۔
کل کمیل کیا کہہ رہا تھا ۔۔۔۔۔کپ ٹیبل پر رکھے اسکے کناروں پر انگلی پھیرتے نرم سے سرد لہجے میں پوچھا۔۔۔۔۔پری جو جلدی جلدی کھا کر بھاگنا چاہتی تھی۔۔۔۔

اسکے پوچھنے پر نوالا گلے میں ہی اٹک گیا ۔۔۔۔ وہ بری طرح کھانس نے لگی جس کی وجہ سے آنکھوں سے آنسو اور چہرا سرخ ہوگیا تھا ۔۔۔۔پر شیری کو کوئی فرق نہیں پڑ رہا تھا ۔۔۔۔وہ ابھی بھی آرام سے کافی کے سپ لیتے اسکے جواب کے منتظر تھا ۔۔۔ پری نے اسے دیکھ کر جیسے تیسے کر کے جگ سے پانی نکال کر پیا تو سانس میں سانس آئی ۔۔۔
 م۔۔مجھے ج۔۔جانا ہے ۔۔۔وہ اپنی گھٹی سی آواز میں بولتی سسکیاں لینے لگی ۔۔۔ اسے اب حقیقت میں سمجھ آیا تھا کہ یہ اتنی دیر کیوں چپ تھا اور اگر کمیل کی بات بتاتی تو شاید کمیل سے پہلے خود کی لاش یہاں پڑی ہوتی ۔۔۔۔

مجھے وہ لوگ بلکل بھی پسند نہیں جو کھانا بیچ میں چھوڑ دیں اور کسی کے سوال کا جواب نا دیں ۔۔۔ میرا دل کرتا ہے ایسے لوگو کے یا تو زبان کاٹ دوں یا ہاتھ ۔۔۔۔سرد پراسرار سا لہجہ۔۔۔
مجھے یہ بھی پسند نہیں کہ میری پری میں ایسی کوئی بھی عادت ہوجو مجھے نا  پسند ہو۔۔۔۔اسکا لہجہ ایسا تھا کہ پری کی ریڑھ کی ہڈی میں سنساہٹ پھیل گئی اور آنکھیں پھٹنے کے قریب ہی ہوگئی۔۔۔۔اسکا معصوم سا دل سکیڑنے لگا ۔۔۔۔ہاتھ پائوں سرد پڑ گئے۔۔۔۔۔وہ خود کو سنبھالتی ٹیبل کو سختی سے پکڑ گئی ۔۔۔۔

 کھانا کھائو ہنی ۔۔۔۔۔پلیٹ کو اسکی طرف کرتے وہ منتظر نظروں سے دیکھنے لگا۔۔۔۔نا چاہتے ہوئے بھی اسکا ہر روپ پری کے سامنے بے پردہ ہورہا تھا۔۔۔۔۔

 ااا۔۔۔اسنے کہا وہ۔۔۔۔۔وہ آنکھیں مسلتی کچھ سوچنے لگی ۔۔۔۔وہ۔۔۔بولا۔۔۔کہ۔۔ہچکیاں سی آنے لگی ۔۔۔ اتنی مشکل ہوگئی تھی زندگی۔۔۔۔

ہاں۔۔۔۔۔شیری نے سر ہلا کر جیسے کہہ میں سن رہا ہوں۔۔۔۔اب آگے بڑھو۔۔۔
وہ۔۔۔میں گر ر۔۔رہی تھی ۔۔ تو بولا ۔۔۔۔کہ س۔۔سنبھال کر دوپٹہ بڑا ہے گ۔۔گر جائوں گی پھر ۔۔۔۔وہ اتنی صفائی سے جھوٹ بولی کہ شیری تو صرف اسکے چہرے کو دیکھتا رہ گیا ۔۔۔

پھر اپنی کافی اسکی طرف بڑھائی۔۔۔۔۔اور آنکھوں کے اشارے سے اسے پینے کا کہہ ۔۔۔۔البتہ بھوری  آنکھوں میں ایک چمک تھی۔۔۔

پری چمچ رکھ کر گھبرا گئی ۔۔۔اور نفی میں سر ہلانے لگی۔۔۔۔مم۔۔۔میں نہیں پ۔۔پیتی۔۔۔
 اپنی بھرائی آواز میں گویا ہوئی۔۔۔۔

پتا نہیں کیوں تمہیں ایک بار میرے لفظ سمجھ نہیں آتے ۔۔۔۔ وہ ایک ایک لفظ غصے سے چبا چبا کر بولا ۔۔۔
جس پر پری نے بنا اسکی طرف دیکھے اندر میں گھٹتی خاموشی سے کپ اٹھا گئی ۔۔۔اور ایک نظر شیری پر ڈال کر آنکھیں میچے کالے پانی کا ایک گھونٹ بھرنے سے اسکی چیخ نکل جاتی اگر شیری کا بھاری ہاتھ اسکے منہ پر نا آتا ۔۔۔۔
وہ جو کوئی چیز تھی پر اسے کافی نا لگی ۔۔۔۔اتنی کڑوی تھی کہ مردے کو بھی پلایا جائے تو وہ بھی توبہ کرکے اٹھ جاتا ۔۔۔۔۔

زبردستی اسکو گھونٹ پلایا گیا اسکے ہاتھ کے دبائو سے۔۔۔
پھر اسکے کان کے قریب ہوکر بولا۔۔۔اگر تمہاری بات میں ذرا بھر بھی جھوٹ ہوا تو میں جھوٹے لوگوں کے لیے میں اتنا کڑوا ہوں۔۔۔۔تو سب سچ بتادو۔۔۔۔اسکے منہ سے ہاتھ ہٹا وہ سرد لہجے میں بولا۔۔۔پری کو کافی پینے سے ابکائی سی آنے لگی۔۔۔۔

یہ۔۔یہی سچ تھ۔۔۔تھا۔۔۔وہ۔کہتی پانی جگ سے نکال کر ایک ہی سانس میں سارا گلاس ختم کرگئی۔۔۔

اور وہاں سے نکل کر جانے والی تھی جب شیری نے اسکو کمر سے پکڑ لیا ۔۔۔۔پھر جھٹکے سے اپنی طرف کھنچ کر اسے کمر سے پکڑ کر کائونٹر پر بٹھایا۔۔۔۔یہ سب اتنی اچانک ہوا کہ پری کو کچھ سمجھنے کا موقعہ بھی نہیں ملا۔۔۔۔جب سنبھلی تو شیری اسکے ہاتھ اپنے ہاتھوں میں لیکر اسکی مہندی کی خوشبو اپنے اندر اتارنے لگا ۔۔۔وہ بوکھلا سی گئی۔۔۔پر اپنی ہاتھ کو کھنچ نا سکی ۔۔۔

ویسے تو مجھے مہندی کی خوشبو اچھی نہیں لگتی پر تمہارے ہاتھوں میں سج کر وہ اپنی مہک کو بھی تمہارے جیسا نشیلا بنا گئی ہے ۔۔۔۔
وہ اسکی ہاتھ کی ہتھیلیوں کو چومتا پیار بھرے لہجے میں گویا ہوا ۔۔۔ ایک دم وہ بدل گیا تھا ۔۔۔۔ پری کے مطابق دوروں کی طرح۔۔۔۔

کیا مہندی پسند ہے تمہیں جانم۔۔۔۔اسکے چہرے پر آئے بالو کو پیچھے کرتا پوچھنے لگا ۔۔۔۔ پری کوئی بھی جواب نہیں دیا اور اپنا ہاتھ آہستہ سے اسکی گرفت سے  نکالنے کی کوشش کرنے لگی۔۔۔۔

اسکی حرکت اور جواب نا دینے پر شیری صرف سرد سی بھوری آنکھیں اسکی سرمئی آنکھوں میں گاڑھی ۔۔۔۔اسکی آنکھوں میں پتا نہیں ایسا کیا تھا جس سے پری کے پور پور میں خوف سا پھیل گیا ۔۔۔اور منہ سے ہڑبڑا کر جلدی سے جواب نکلا ۔۔۔۔

ہہہ۔۔۔۔ہاں پ۔۔پسند ہے ۔۔۔بب۔۔بہت۔۔
اور کیا کیا پسند ہے ۔۔۔۔؟؟اسکی نازک گلابی گال پر اپنے ہاتھ کی پشت سے سہلانے لگا ۔۔۔پری کو لگا اگر آج یہاں سے زندہ بچ کر نکلی تو زندگی کی نئی شروعات ہوگی۔۔۔

س۔۔۔سب کچھ۔۔۔وہ نظر جھکائے معصومیت سے ایسے بولی جیسے گناھ کا اطراف کر رہی ہو۔۔ 

سب کچھ میں میں بھی شامل ہوں کیا؟؟۔۔۔۔۔وہ اسکے جھکے سر کو دیکھ کر شرارت سے گویا ہوا ۔۔۔۔

اسکی بات نے جیسے پری کو ہزاروں وولٹ کا جھٹکا دیا۔۔۔۔بوکھلا کر جلدی سے بولی۔۔۔

نن۔۔نہیں ۔۔صرف م۔۔مہندی ۔۔پھ۔۔پھول برف پانی ۔۔او۔۔اور بارش۔۔۔اسکی بات پر شیری کا دل کیا قہقہے لگا پر سب کا خیال کرکے اور اسکے سیریس چہرے کو دیکھ کر دبا گیا۔۔۔

کھانا نہیں پسند۔۔۔؟؟وہ اسکے پانی لفظ سن کر مذاق میں بولا پر پری کو سمجھ آتا تو۔۔۔

پ۔۔پسند ہے۔۔۔۔بولتی اسکی شرٹ کے بٹنس کو دیکھتی جیسے التجا کرنے لگی۔۔۔
ک۔۔کیا اب مم۔۔میں جائوں ۔۔۔

اسکی بات پر وہ اسکے دونوں ہاتھ اپنے لبوں سے لگا کر پھر بولا۔۔۔

 ہنی تمہں نہیں پتا میں آج سارا دن تمہارا چہرا دیکھنے کے لیے کتنا تڑپا ہوں ۔۔۔ایک پل کے لیے بھی سکون نہیں مجھے ۔۔۔پھر شاید اللہ پاک مجھ پر رحم آگیا تو اسنے میری بے سکونی میرا مزید امتحان لینے کا ارادہ ترک کرکے تمہیں بیجھ دیا۔۔۔۔اور اب تم اتنی جلدی جانے کا کہہ رہی ہو ۔۔۔۔

اب تمہیں دیکھنے کے بعد سکون کی نیند لوں گا ۔۔۔ پری خاموشی سے سر جھکائے ڈر سے ہونٹ کاٹ رہی تھی اور شہریار اسے اپنے دل کا حال بتانے کے ساتھ سرخ ہونٹوں کے ساتھ اسکی حرکت دیکھنے لگا۔۔۔

یہ ظلم ہے ڈارلنگ اس پر صرف میرا حق ہے ۔۔۔اسکے زخمی لبوں کو آزاد کرواکر کچھ سرد آواز میں بولو  ۔۔۔تیز کاٹنے پر سرخ ہونٹوں سے خون کی بوندیں نکلنے لگی تھی ۔۔۔ جنہیں شیری نے دیکھ کر اپنی پینٹ کی جیب سے رومال نکال کر اس سے اسکا خون صاف کرکے ۔۔ اسی خون پر اپنے ہونٹ رکھ دئے۔۔۔پری جو اسے دیکھ رہی تھی اسکی حرکت پر دل حلق میں آگیا ۔۔۔دھڑکن تھی کہ دھول کی طرح دھک دھک کر رہی تھی۔۔۔

وہ ہڑبڑا کر اترنے لگی تو شیری نے دونوں طرف کائونٹر پر ہاتھ دئے۔۔۔۔اور پری کو پیچھے کھسکنے پر مجبور کردیا۔۔۔۔۔
اسنے اپنے سفید پڑتے چہرے کے ساتھ سرمئی سہمی نظریں اٹھا کر اسے دیکھنے لگی ۔۔۔پر اسکی بھوری سرد نظریں اپنے لبوں سے نکلتے خون کی طرف تھی۔۔۔۔اسکا گلا خشک ہوگیا جلدی سے ہاتھ کی پشت سے اسے صاف کرنا چاہا تو شہریار نے بیچ میں ہی اسکا ہاتھ پکڑ کر اسے اپنی طرف کھینچا۔۔۔۔وہ کائونٹر سے سڑکتی اسکے گلے سے  لگی۔۔۔۔۔

اور شیری نے اسکے ہونٹوں سے بوند بوند نکلتے خون کو اپنے لبو سے صاف کرنے لگا ۔۔۔ تم بہت قیمتی ہو شیر کے لیے ۔۔۔۔شاید شہریار اتنا جنونی نا ہوتا پر تمنے شیر کو جگا دیا ہے ۔۔۔جس سے رہائی نا مناسب ہے ۔۔۔جس کی ڈکشنری میں پری کے نام کی رہائی کا لفظ ۔۔۔پیج سمیت جلادیا گیا ہے ۔۔۔۔۔

وہ پراسرار سا سرگوشی میں اسکے کان میں کہتا اسکے لرزتے وجود کو نیچے اتار کر ۔۔۔۔اسکے بالوں کلپ سے آزاد کرواکر اسکی خوشبو کو اندر اتارتا شدت دیوانگی سے بولا۔۔۔۔

Honey you are  mine ...only mine.....
ہلکی سی بڑھی ہوئی شیو سے اسکی نازک گال کو ٹچ کیا جس پر پری دہشتزدہ ہوگئی۔۔۔۔
کہنے کے ساتھ اسے آزاد کیا تو وہ بنا مڑے بھاگنے والی تھی جب دوپٹہ شیری نے پکڑ لیا۔۔۔۔۔وہ لرزتی کانپتی بھاری آواز میں گویا ہوئی ۔۔۔۔۔

مم۔۔۔مجھے نیند آ۔۔آرہی ہے۔۔۔اسکے کہنے پر شیری نے آہستہ سے دوپٹہ چھوڑا ۔۔۔۔تو وہ بھاگتی ہوئی کچن سے نکلتی اوپر چلی گئی۔۔۔۔۔۔

وہ کچن کی چوکھٹ پر کھڑا اسے جاتا دیکھاتا رہا۔۔۔۔۔۔دیکھتا نہیں ساکت ہوگیا منظر دیکھ کر جہاں ۔۔۔۔کمر پر لہراتے گھنے کالے بالوں کی آبشار ۔۔۔سیڑھیوں پر بچھے سرخ ململ کے قالین پر گلابی ننگھے پائوں جماتی۔۔۔آدھے شانوں پر رکھے دوپٹے اور آدھا زمین کو چھوتا وہ کوئی ۔۔۔۔ پریوں کے دیس کی پری ہی لگی۔۔۔۔۔۔اتنا حسین منظر تھا کہ اسکا دل بلند آواز میں دھڑک اٹھا ۔۔۔۔۔ایک سحر سا جادو تھا پری میں  ۔۔۔

وہ تو چلی گئی تھی پر شیری ابھی بھی اسکے سحر میں تھا۔۔۔۔
پھر اس سحر کو موبائل کی رنگٹون نے توڑا ۔۔۔۔۔

وہ ہوش میں آتے جھنجھلا گیا ۔۔۔۔ ہاتھ کو حرکت دی تو کچھ محسوس ہوا جسے دیکھنے پر خوبصورت چہرے پر جھنجھلاہٹ کی جگہ پیاری سی مسکراہٹ نے لےلیا۔۔۔۔وہاں کچھ اور نہیں پری کے بالوں کا کلپ تھا ۔۔۔۔۔

جسے چوم کر جیب میں رکھا ۔۔۔۔اب یہ تمہیں تب ملے گا جب تم مکمل میری دسترس میں آئوگی۔۔۔۔۔۔ اور موبائل نکال کر دیکھا تو عزل کی کال تھی ۔۔۔۔ 

وہ اوکے کرتا موبائل کان سے لگائے واپس گھر سے نکلتا چلاگیا۔۔۔۔۔۔۔

💕💕💕💕💕💕